India sends thousands more paramilitary personnel to occupied Jammu and Kashmir

0
940
India sends thousands more paramilitary personnel to occupied Jammu and Kashmir
India sends thousands more paramilitary personnel to occupied Jammu and Kashmir

بھارت نے مزید ہزاروں نیم فوجی اہلکار مقبوضہ جموں و کشمیر بھیجے

India has sent thousands more paramilitary personnel to occupied Jammu and Kashmir, one of the most militarized zones in the world, due to the rising incidence of targeted killings in recent weeks.

According to the foreign news agency AFP, New Delhi has deployed at least 500,000 troops in the occupied valley for decades.

A spokesman for the Paramilitary Central Reserve Police Force (CRPF), Abhiram Pankaj, said, “About 2,500 personnel have arrived and have been deployed across the Kashmir Valley, with more to come.”

A total of about 5,000 additional paramilitary personnel are being deployed this week, the police officer said.

A portion of the staff is housed in civilian community halls, reinforced with new mud bag bunkers, reminiscent of the early 1990s, when resistance to Indian rule was at its height.

Twelve people have been killed in targeted operations in the occupied valley over the past month, including police officers, migrant workers from the northern states of India and local leaders of the Sikh and Hindu communities.

Some of those killed were accused by local resistance groups of being employees of Indian forces.

Police and paramilitary forces, armed with bulletproof gear and automatic rifles, have stepped up searches of residents, including children, on the streets since the incidents.

Newly deployed Indian troops are now seen around several new outposts set up in Srinagar in recent weeks.

حالیہ ہفتوں میں ٹارگٹ کلنگ کے بڑھتے ہوئے واقعات کی وجہ سے بھارت نے ہزاروں مزید نیم فوجی اہلکاروں کو مقبوضہ جموں و کشمیر بھیج دیا ہے، جو دنیا کے سب سے زیادہ عسکری علاقوں میں سے ایک ہے۔

غیر ملکی خبر رساں ادارے اے ایف پی کے مطابق نئی دہلی نے کئی دہائیوں سے مقبوضہ وادی میں کم از کم پانچ لاکھ فوجی تعینات کر رکھے ہیں۔

پیرا ملٹری سنٹرل ریزرو پولیس فورس (سی آر پی ایف) کے ایک ترجمان ابھیرام پنکج نے کہا، “تقریباً 2500 اہلکار پہنچ چکے ہیں اور وادی کشمیر میں تعینات کر دیے گئے ہیں، اور مزید آنے والے ہیں۔”

پولیس افسر نے کہا کہ اس ہفتے تقریباً 5,000 اضافی نیم فوجی اہلکار تعینات کیے جا رہے ہیں۔

عملے کے ایک حصے کو سویلین کمیونٹی ہالز میں رکھا گیا ہے، جسے مٹی کے تھیلے کے نئے بنکروں سے تقویت ملی ہے، جو 1990 کی دہائی کے اوائل کی یاد دلاتا ہے، جب ہندوستانی حکمرانی کے خلاف مزاحمت عروج پر تھی۔

مقبوضہ وادی میں گزشتہ ماہ کے دوران ٹارگٹڈ کارروائیوں میں بارہ افراد ہلاک ہوچکے ہیں جن میں پولیس افسران، بھارت کی شمالی ریاستوں سے آئے ہوئے تارکین وطن کارکنان اور سکھ اور ہندو برادریوں کے مقامی رہنما شامل ہیں۔

ہلاک ہونے والوں میں سے کچھ پر مقامی مزاحمتی گروپوں کا الزام تھا کہ وہ بھارتی فورسز کے ملازم تھے۔

پولیس اور نیم فوجی دستوں نے، بلٹ پروف گیئر اور خودکار رائفلوں سے لیس، واقعات کے بعد سے سڑکوں پر بچوں سمیت رہائشیوں کی تلاشی کا عمل تیز کر دیا ہے۔

حالیہ ہفتوں میں سری نگر میں قائم کئی نئی چوکیوں کے ارد گرد نئے تعینات ہونے والے بھارتی فوجی اب دیکھے جا رہے ہیں۔