Home World India-China talks failed Ladakh dispute

India-China talks failed Ladakh dispute

لداخ تنازعہ پر بھارت اور چین کے مذاکرات ناکام ہوگئے

Negotiations between Chinese and Indian military officials to end 17 months of tensions on the disputed Ladakh border in the western Himalayas have failed.

According to the foreign news agency ‘AP’, China and India were informed about the disappointing progress.

The failure of the talks means that the armies of the two countries will be present in Ladakh in the dead of winter.

The Indian defense minister said in a statement that he had been offered “positive suggestions” but did not “express willingness” and did not make any “suggestions”.

According to a Chinese military spokesman, “the demands of the Indian authorities are unrealistic and irrational, which has made negotiations difficult.”

Following the disappointing results of the talks, the Indian army chief said on October 10 that China had sent a large number of troops and weapons to the disputed area.

Indian Army Chief General Manoj Makandnarwa said, “Yes! It is a matter of concern that large-scale military mobilization is still going on and the development of infrastructure towards China is in full swing.

“So, that means they (China) will be there, we’re keeping a close eye on all this progress, but if they’re there, we’re going to be there,” he said.

“China’s commitment to safeguarding its sovereignty is unwavering and China hopes that India will not misunderstand the situation,” said Col. Long Shaova, a senior member of China’s Western Theater Command.

Keep in mind that around January, temperatures in areas beyond Ladakh reach minus 30.

According to media reports, the two countries’ forces are camping in the Galvan Valley of Ladakh and accusing each other of crossing the disputed border.

India and China share a border with the Himalayas and the two countries have a long-running border dispute, with both blaming each other.

China claims 90,000 sq km in India’s northeastern region, while India claims that China has occupied 38,000 sq km in the western Himalayas, and the two countries have held dozens of meetings over the border dispute. Have done but no solution could be found.

No shots were fired during the June 15 battle in the Gulwan Valley of Ladakh and Indian troops were stoned, but it was nevertheless the worst clash between Asia’s armed nuclear powers in decades.

مغربی ہمالیہ میں متنازعہ لداخ سرحد پر 17 ماہ سے جاری کشیدگی کے خاتمے کے لیے چینی اور بھارتی فوجی حکام کے درمیان مذاکرات ناکام ہو گئے ہیں۔

غیر ملکی خبر رساں ایجنسی ‘اے پی’ کے مطابق چین اور بھارت کو مایوس کن پیش رفت سے آگاہ کیا گیا۔

مذاکرات کی ناکامی کا مطلب ہے کہ دونوں ملکوں کی فوجیں سردیوں کے موسم میں لداخ میں موجود ہوں گی۔

بھارتی وزیر دفاع نے ایک بیان میں کہا کہ انہیں ’’ مثبت تجاویز ‘‘ کی پیشکش کی گئی لیکن انہوں نے ’’ رضامندی ‘‘ کا اظہار نہیں کیا اور نہ ہی کوئی ’’ تجاویز ‘‘ پیش کیں۔

چینی فوج کے ترجمان کے مطابق ، “بھارتی حکام کے مطالبات غیر حقیقی اور غیر معقول ہیں ، جس کی وجہ سے مذاکرات مشکل ہو گئے ہیں۔”

مذاکرات کے مایوس کن نتائج کے بعد بھارتی فوج کے سربراہ نے 10 اکتوبر کو کہا کہ چین نے متنازعہ علاقے میں بڑی تعداد میں فوج اور ہتھیار بھیجے ہیں۔

بھارتی آرمی چیف جنرل منوج مکندرنوا نے کہا ، “ہاں! یہ تشویش کی بات ہے کہ بڑے پیمانے پر فوجی نقل و حرکت اب بھی جاری ہے اور چین کی طرف انفراسٹرکچر کی ترقی زوروں پر ہے۔

“تو ، اس کا مطلب ہے کہ وہ (چین) وہاں ہوں گے ، ہم اس تمام پیش رفت پر گہری نظر رکھے ہوئے ہیں ، لیکن اگر وہ وہاں ہیں تو ہم وہاں موجود ہوں گے ،” انہوں نے کہا۔

چین کی ویسٹرن تھیٹر کمانڈ کے ایک سینئر رکن کرنل لانگ شاوا نے کہا ، “چین کی اپنی خودمختاری کی حفاظت کا عزم غیر متزلزل ہے اور چین کو امید ہے کہ بھارت صورتحال کو غلط نہیں سمجھے گا۔”

یاد رکھیں کہ جنوری کے آس پاس ، لداخ سے باہر کے علاقوں میں درجہ حرارت منفی 30 تک پہنچ جاتا ہے۔

میڈیا رپورٹس کے مطابق دونوں ملکوں کی افواج لداخ کی وادی گالوان میں ڈیرے ڈال رہی ہیں اور ایک دوسرے پر متنازعہ سرحد پار کرنے کا الزام لگا رہی ہیں۔

ہندوستان اور چین کی سرحدیں ہمالیہ کے ساتھ ہیں اور دونوں ممالک کے درمیان ایک طویل عرصے سے سرحدی تنازعہ ہے ، دونوں ایک دوسرے پر الزامات عائد کرتے ہیں۔

چین بھارت کے شمال مشرقی علاقے میں 90 ہزار مربع کلومیٹر کا دعویٰ کرتا ہے جبکہ بھارت کا دعویٰ ہے کہ چین نے مغربی ہمالیہ میں 38 ہزار مربع کلومیٹر پر قبضہ کر رکھا ہے اور دونوں ممالک نے سرحدی تنازعے پر درجنوں ملاقاتیں کی ہیں۔ کیا ہے لیکن کوئی حل نہیں مل سکا۔

لداخ کی وادی گلون میں 15 جون کی لڑائی کے دوران کوئی گولی نہیں چلائی گئی اور بھارتی فوجیوں پر پتھراؤ کیا گیا ، لیکن اس کے باوجود یہ کئی دہائیوں میں ایشیا کی مسلح ایٹمی طاقتوں کے درمیان بدترین تصادم تھا۔

LEAVE A REPLY

Please enter your comment!
Please enter your name here

Most Popular

Nationwide protests against inflation

مہنگائی کے خلاف ملک گیر مظاہرے The Pakistan Democratic Movement (PDM), an alliance of opposition parties, and the...

The rivalry between Pakistan and India is incomparable: Matthew Hayden

پاکستان اور بھارت کی دشمنی بے مثال ہے: میتھیو ہیڈن Matthew Hayden said that rivalry between Pakistan and...

Salman Butt Scores most runs in single T20 World Cup.

سلمان بٹ نے سنگل ٹی 20 ورلڈ کپ میں سب سے زیادہ رنز بنائے The Super 12 leg...

You Should leave Pakistan: CM Sind Burst on PM

آپ پاکستان چھوڑ دیں: وزیراعلیٰ سندھ وزیراعظم پر پھٹ پڑے Reacting to the rising prices on PTI, Sindh...

Recent Comments