Home Pakistan Steps To Promote Agriculture Sector, Financial Advisor Abdul Hafeez Sheikh

Steps To Promote Agriculture Sector, Financial Advisor Abdul Hafeez Sheikh

زراعت کے شعبے کو فروغ دینے کے لئے اقدامات ، مشیر خزانہ عبدالحفیظ شیخ

اسلام آباد : وزیر اعظم کے مشیرِ خزانہ ڈاکٹر عبدالحفیظ شیخ نے ہفتہ کو ملک میں غذائی تحفظ اور تحفظ کو برقرار رکھنے کے لئے مقامی زراعت کے شعبے کے تحفظ اور فروغ کے حکومتی عزم کا اعادہ کیا۔

بجٹ کے بعد پریس کانفرنس سے خطاب کرتے ہوئے ، انہوں نے کہا کہ کورونا وائرس وبائی مرض نے قومی معیشت کے تمام طبقات کو بری طرح متاثر کیا ہے کیونکہ قومی جی ڈی پی کو جمع ہونے والے ابتدائی نقصان کا تخمینہ 3000 ارب روپے ہے۔

انہوں نے کہا کہ حکومت نے عوام کے تحفظ کے ساتھ ساتھ ملک میں تجارتی اور صنعتی شعبے کی بحالی کے لئے ایک محرک پیکیج کا اعلان کیا ہے جس پر مجموعی طور پر 1،200 ارب روپے لاگت آئے گی۔

انہوں نے کہا کہ گندم کی خریداری کے لئے 280 ارب روپے کی رقم مختص کی گئی ہے ، انہوں نے مزید کہا کہ اس رقم سے کاشتکاروں کو زرعی اوزار ، اِن پُٹ اور دیگر بنیادی ضروریات کو خریدنے میں مدد ملے گی۔

ڈاکٹر حفیظ نے کہا کہ کاشتکاروں کو پیداوار میں اضافے کے لئے سبسڈی والے نرخوں پر کھاد فراہم کرنے کے لئے 50 ارب روپے مختص کیے گئے ہیں۔ ڈاکٹر عبدالحفیظ شیخ نے بتایا کہ محدود وسائل اور کورونا وائرس وبائی مرض کے باوجود حکومت نے 2020-21 کے بجٹ میں عوام کو زیادہ سے زیادہ ریلیف کی فراہمی کی کوشش کی ۔

انہوں نے کہا کہ درآمدات میں اضافہ ، برآمدات میں کمی ، زرمبادلہ کے ذخائر کو ختم کرنے اور کرنٹ اکاؤنٹ کو وسیع کرنے اور بجٹ خسارے کے ساتھ ایک خراب معیشت اُن کو وراثت میں ملی ہے۔

انہوں نے مزید کہا کہ درآمدات اور بڑھتی ہوئی برآمدات کی وجہ سے زرمبادلہ کے ذخائر بے حد دباؤ میں تھے جب کہ موجودہ کھاتوں کا خسارہ 20 بلین ڈالر ہوگیا ہے ، جسے موجودہ حکومت نے 3 ارب ڈالر تک لایا ہے۔

مشیر نے کہا کہ حکومت نے معاشی استحکام لانے کے لئے غیر ترقیاتی اخراجات کو کم کرنے کے علاوہ مشکل فیصلے کے ساتھ بجٹ اور مالی نظم و ضبط قائم کیا۔

Finance Advisor Dr. Abdul Hafeez Sheikh

انہوں نے کہا کہ مسلسل کوششوں کی وجہ سے ، اقتصادی اشارے میں لچک پیدا ہونا شروع ہوگئی تھی اور محصول کی وصولی میں 17 فیصد کا نمایاں اضافہ دیکھنے میں آیا جب کہ غیر ٹیکس آمدنی ایک ہزار چھ سو ارب روپے تک پہنچ گئی۔

انہوں نے کہا کہ حکومت کے معاشی اصلاحات پروگرام کو بین الاقوامی کریڈٹ ریٹنگ ایجنسیوں اور ترقیاتی شراکت داروں نے بڑے پیمانے پر سراہا ہے ، بشمول بین الاقوامی مالیاتی فنڈ ، ورلڈ بینک اور موڈیز۔

انہوں نے مزید کہا کہ بین الاقوامی فورموں کو تسلیم کرنے سے مقامی اور غیر ملکی دونوں سرمایہ کاروں کا اعتماد بحال ہوا ہے کیونکہ غیر ملکی سرمایہ کاری میں تقریبا 137 فیصد اضافہ ہوا ہے۔

انہوں نے کہا ، حکومت کی تمام کوششوں کو کورونا وائرس وبائی امراض کے پیلائو کے باعث رکاوٹوں کا سامنا ہے ، جس نے عالمی معیشت کے ساتھ ساتھ لاکھوں افراد کو بھی متاثر کیا۔

انہوں نے کہا کہ آئی ایم ایف کے تخمینے کے مطابق ، مجموعی طور پر عالمی آمدنی میں 1.4 فیصد کی کمی کا امکان ہے ، اور اس صورتحال نے پاکستان کی مقامی تجارت اور صنعتی شعبوں پر بھی منفی اثر ڈالا ہے۔

انہوں نے کہا کہ اس وبائی مرض سے قومی معیشت کو 3000 بلین روپے کی گروس ڈومیسٹک پروڈکشن میں اضافے کا سامنا کرنا پڑا ، اور محصولات میں بھی 700 ارب روپے کی کمی واقع ہوئی ہے ، انہوں نے مزید کہا کہ صنعتی لاک ڈاؤن کی وجہ سے بہت سارے افراد روزگار سے محروم رہے جبکہ غربت اور بے روزگاری بڑھ گئی تھی۔

مشیر نے کہا کہ محدود وسائل کے باوجود حکومت نے لوگوں کو اپنی روز مرہ کی ضروریات کو پورا کرنے کے لئے مالی امداد فراہم کرنے کے لئے ایک امدادی پروگرام شروع کیا۔ بغیر کسی سیاسی ، علاقائی یا مذہبی امتیاز کے ایک کروڑ سے زیادہ افراد نے اس پروگرام سے فائدہ اٹھایا تھا ، جسے شفاف انداز میں انجام دیا گیا تھا۔

انہوں نے کہا کہ زراعت کے شعبے کو فروغ دینے کے لئے ، حکومت نے 280 ملین روپے میں گندم کی خریداری کا فیصلہ کیا ہے جس سے کسانوں کو ان کی ضروریات کو پورا کرنے میں مدد ملے گی۔ انہوں نے مزید کہا کہ حکومت نے کھاد پر دی جانے والی سبسڈی کے لئے 50 ارب روپے بھی مختص کیے ۔

انہوں نے کہا کہ حکومت نے چھوٹے کاروباری اداروں کو مالی امداد بھی فراہم کی ہے ، جو وبائی امراض کی وجہ سے سخت متاثر ہوئے تھے۔

انہوں نے مزید کہا کہ اس پروگرام سے 600،000 سے زیادہ کاروباری اداروں کو فائدہ ہوا ۔ حفیظ شیخ نے کہا کہ غیر ملکی قرضوں کی ادائیگی ملک کے لئے بہت بڑا مسئلہ ہے۔ حکومت اپنے عوامی شعبے کے ترقیاتی بجٹ میں اضافہ کرنا چاہتی ہے اور تعلیم اور صحت پر زیادہ خرچ کرنا چاہتی ہے ، لیکن آئندہ مالی سال (2020-21) کے دوران اسے 2،900 ارب روپے کا بیرونی قرض ادا کرنا پڑے گا۔

انہوں نے مزید کہا کہ حکومت نے اپنے چلتے اخراجات کو کم کرنے کا فیصلہ کیا ہے تاکہ وہ معاشی نمو کے لئے مزید فنڈز مختص کرسکے۔

مشیر نے کہا کہ کوئی نیا ٹیکس عائد کرنے کا فیصلہ نہیں کیا گیا ہے۔ حکومت نے برآمدی شعبے کے فروغ کے لئے بجٹ 2020-21 میں تقریبا 1،623 صفر ریٹیڈ ٹیرف لائنوں کا اعلان کیا۔ مقامی برآمدات کے فروغ کے لئے اُنہوں نے ایک بار پھر 200 ٹیرف لائنوں اور ریگولیٹری ڈیوٹی (آر ڈی) پر ٹیکس ڈیوٹی کو کم کرنے کا فیصلہ کیا ہے۔

انہوں نے مزید کہا کہ ٹیرف لائنوں کو کم کرنے کا مقصد قومی معیشت کے مختلف امکانی شعبوں کے لئے کاروبار کی لاگت کو کم کرنا تھا۔

حفیظ شیخ نے کہا کہ حکومت نے 10 مختلف موجودہ ود ہولڈنگ ٹیکس ختم کرنے اور درآمدی محصولات کو 5 سے 2 فیصد تک کم کرنے کا بھی فیصلہ کیا ہے۔

مشیر نے کہا کہ حکومت نے صنعتی نمو کے لئے اس شعبے پر کیپیٹل گین ٹیکس میں کمی اور روزگار کے مواقع میں اضافہ کرنے کے علاوہ تعمیراتی صنعت کو ایک بہت بڑا ریلیف پیکج فراہم کیا ہے۔

انہوں نے مزید کہا ، “ہم نے تعمیراتی صنعت کے ساتھ ساتھ لوگوں کو کاروبار کی لاگت میں کمی کرکے ریلیف کی فراہمی کے لئے سیمنٹ پر فیڈرل ایکسائزڈیوٹی (ایف ای ڈی) کو بھی کم کردیا ہے۔”

“ہم نے قومی معیشت میں ترقی کے لئے تعمیراتی شعبے کی حوصلہ افزائی کی اور لوگوں کو روزگار کے مواقع فراہم کیے۔”

حفیظ شیخ نے کہا کہ حکومت نے فیڈرل بورڈ آف ریونیو (ایف بی آر) میں آٹومیشن کی حوصلہ افزائی کی ہے۔ “ہم نے ایف بی آر میں خودکار عمل کے ذریعے اپنے ٹیکس ادا کرنے والے ٹیکس دہندگان کو مزید ریلیف دینے کا فیصلہ کیا ہے۔”

انہوں نے کہا کہ حکومت نے طبی آلات پر درآمدی ڈیوٹی بھی ختم کردی ہے ، جس میں کینسر ، کورونا وائرس اور ایڈز (ایچ آئی وی) سمیت مختلف امراض کی ٹیسٹ کٹس شامل ہیں ، لہذا یہ مقامی مارکیٹ میں کم سے کم قیمتوں پر بھی دستیاب ہوسکتی ہیں ۔

انہوں نے کہا کہ حکومت نے بزنس سیکٹر کے ضابطے کو بھی ترجیح دی ہے۔ انہوں نے مزید کہا کہ وہ پبلک سیکٹر ڈویلپمنٹ پروگرام (پی ایس ڈی پی) اور احساس پروگرام پر اپنے اخراجات میں اضافہ کرنا چاہتا ہے تاکہ عام لوگوں کو زیادہ سے زیادہ ریلیف مل سکے۔

ISLAMABAD: Prime Minister’s Finance Adviser Dr. Abdul Hafeez Sheikh on Saturday reaffirmed the government’s commitment to protect and promote the local agricultural sector to ensure food security in the country.

At a press conference after the budget, he said the Covid-19 epidemic had hit all parts of the economy hard, with the initial loss of national GDP estimated at 3,000 billion rupees.

He said the government announced a stimulus package to protect the population and revitalize the country’s commercial and industrial sectors at a total cost of 1,200 billion rupees.

He said that 280 billion rupees were earmarked for the purchase of wheat, adding that this amount would help farmers buy agricultural equipment, inputs, and other basic necessities.

Dr. Hafeez said that 50 billion rupees have been allocated to provide farmers with fertilizer at subsidized prices to increase production. Dr. Abdul Hafeez Sheikh said that despite limited resources and the Covid-19 epidemic, the government tried to provide maximum help to people in the 2020-21 household.

He said he inherited a bad economy with an increase in imports, a decrease in exports, a depletion of foreign exchange reserves and an expansion of the current account and budget deficit.

He added that foreign exchange reserves were under pressure due to imports and rising exports, while the current account deficit was 20 to 20 billion, which the current government had reduced to 3 billion.

The adviser said the government had made a difficult decision to set budgets and financial discipline, and reduced non-development spending to achieve economic stability.
۔

He said economic indicators have become increasingly flexible due to ongoing efforts and revenue collection has increased significantly by 17% while non-tax revenue has reached Rs 1,600 billion.

He said the government’s economic reform program has been widely praised by international rating agencies and development partners, including the International Monetary Fund, the World Bank, and Moody’s.

He added that the recognition of international forums has restored confidence among both domestic and foreign investors, as foreign investment has increased by about 137%.

He said all government efforts were hampered by the outbreak of the Covid-19 epidemic, which affected both the global economy and millions of people.

According to IMF estimates, total global revenue is expected to decrease by 1.4%, and this situation has also had a negative impact on Pakistan’s local trade and industry.

He said the epidemic boosted the economy by 3,000 billion rupees gross domestic product and reduced revenues by 700 billion rupees, adding that the industrial blockage did a lot of damage. All people lost their jobs, while poverty and unemployment increased.

Despite limited resources, the government launched an aid program to provide financial support for people’s daily needs, the adviser said. More than 10 million people, regardless of their political, regional or religious affiliation, benefited from the program, which was carried out in a transparent manner.

To stimulate the agricultural sector, the government decided to buy wheat at Rs 280 million to help farmers meet their needs. He added that the government had also allocated 50 billion rupees for fertilizer subsidies.

He said the government has also given financial support to small businesses that have been hard hit by epidemics.

He added that the program had benefited more than 600,000 companies. Hafeez Sheikh said that repayment of foreign loans is a big problem for the country. The government plans to increase its public sector development budget and spend more on education and health, but will have to repay Rs 2,900 billion in foreign debt in the next fiscal year (2020-21).

He added that the government had decided to cut its current spending to provide more funds for economic growth.

No new tax was decided, the adviser said. The government announced around 1,623 zero tariff lines in the 2020-21 budget to boost the export sector. To boost local exports, they again decided to cut the tax on 200 customs lines and the Regulatory Tax (RD).

He added that the reduction in tariff lines was aimed at reducing business costs for various potential sectors of the economy.

Hafeez Sheikh said the government also decided to abolish 10 different existing holding taxes and cut import duties by 5 to 2 percent.

The consultant said the government has provided a huge aid package to the construction industry, in addition to lowering the capital gains tax and increasing employment opportunities in the industry for industrial growth.

He added that,

“We have also reduced the federal exercise duty (FED) on cement to provide relief to the construction industry as well as the people by decreasing the cost of business.”

“We have encouraged the construction sector to strengthen the economy and create jobs for people.”

Hafeez Sheikh said the government had promoted automation on the Federal Board of Revenue (FBR). “We decided to give our taxpayers more relief through automated processes in the FBR.”

He said the government has also abolished import duties on medical devices, including test kits for various diseases such as cancer, Covid-19, and AIDS (HIV), so that they are also available in the local market at minimal prices. Could be

He said the government also gave priority to corporate sector regulations. He added that he wanted to increase spending on the Public Sector Development Program (PSDP) and the Ehsas program so that the common man could get maximum relief.

Most Popular

Sindh Emergency Rescue 1122 Jobs 2022 PTS Application Form

Sindh Emergency Rescue Service 1122 is seeking applications from experienced and energetic candidates for Rescue 1122 Sindh Jobs 2022 against the vacant...

200 Rs Prize Bond Draw List 90 Multan Result 2022

Multan, As per the Prize Bond Schedule 2022 issued by the National Savings of Pakistan, The 90th draw of Rs 200 Prize Bond List 2022 is held...

25000 Rs Premium Prize Bond List 10 June 2022 Hyderabad

Hyderabad, 25000 Rs Premium Prize Bond Draw List 6 winners 2022 has announced at Hyderabad on 10 June, 2022, this is the 25000 Rs...

40000 Rs Premium Prize Bond List 21 10 June 2022 Muzaffarabad Winner List

Muzaffarabad, 40000 Rs Premium Prize Bond Draw winners 2022 has announced at Muzaffarabad on June 10, 2022, this is the 40000 Rs Premium Prize...

Recent Comments