Shahid Khaqan Anbbasi announced to challnege NAB Orinance in Court

0
842
Govt should stop forming commissions and let the country run: Shahid Khaqan Abbasi
Govt should stop forming commissions and let the country run: Shahid Khaqan Abbasi

شاہد خاقان عباسی نے نیب آرڈیننس کو عدالت میں چیلنج کرنے کا اعلان کیا

Rejecting the National Accountability Bureau (NAB) Amendment Ordinance, senior PML-N leader Shahid Khaqan Abbasi announced to challenge it in court and in the Senate.

Talking to media in the capital on Tuesday, the former prime minister said that the government had brought a new NAB ordinance without consulting the opposition parties.

Abbasi said the government wanted to extend NAB chairman retired Justice Javed Iqbal.

The PML-N leader criticized the Pakistan Tehreek-e-Insaf (PTI) government, saying the country’s economy was collapsing, but neither the prime minister nor the ministers cared.

He added that instead of focusing on eradicating inflation and unemployment from the country, the government was focused on saving its mistakes through the NAB Ordinance.

“We will decide on our future course of action at the October 18 meeting of the Pakistan Democratic Movement (PDM),” he said.

The PML-N leader also hinted at turning to the PPP because, according to Abbasi, the PPP may not be part of the PDM, but it was in opposition and the opposition parties were consulted on important issues.

قومی احتساب بیورو (نیب) ترمیمی آرڈیننس کو مسترد کرتے ہوئے مسلم لیگ ن کے سینئر رہنما شاہد خاقان عباسی نے اسے عدالت اور سینیٹ میں چیلنج کرنے کا اعلان کیا۔

منگل کو دارالحکومت میں میڈیا سے گفتگو کرتے ہوئے سابق وزیراعظم نے کہا کہ حکومت اپوزیشن جماعتوں سے مشاورت کے بغیر نیا نیب آرڈیننس لائی ہے۔

عباسی نے کہا کہ حکومت نیب کے چیئرمین ریٹائرڈ جسٹس جاوید اقبال کو توسیع دینا چاہتی ہے۔

مسلم لیگ (ن) کے رہنما نے پاکستان تحریک انصاف (پی ٹی آئی) کی حکومت کو تنقید کا نشانہ بناتے ہوئے کہا کہ ملکی معیشت تباہ ہو رہی ہے ، لیکن نہ وزیر اعظم اور نہ ہی وزراء کو پرواہ ہے۔

انہوں نے مزید کہا کہ حکومت ملک سے مہنگائی اور بے روزگاری کے خاتمے پر توجہ دینے کے بجائے نیب آرڈیننس کے ذریعے اپنی غلطیوں کو بچانے پر توجہ مرکوز کر رہی ہے۔

انہوں نے کہا کہ ہم اپنے مستقبل کے لائحہ عمل کا فیصلہ 18 اکتوبر کو پاکستان ڈیموکریٹک موومنٹ کے اجلاس میں کریں گے۔

مسلم لیگ (ن) کے رہنما نے پی پی پی کی طرف رجوع کرنے کا اشارہ بھی دیا کیونکہ عباسی کے مطابق پیپلز پارٹی شاید پی ڈی ایم کا حصہ نہ ہو ، لیکن وہ اپوزیشن میں تھی اور اپوزیشن جماعتوں سے اہم معاملات پر مشاورت کی گئی۔