Ready to welcome Sugar Commission, Will Jahangir Tareen Return?

0
625

شوگر کمیشن استقبال کرنے کے لئے تیار ، کیا جہانگیر ترین واپس آجائیں گے؟

اسلام آباد: پی ٹی آئی کے سربراہ جہانگیر ترین لندن سے پاکستان واپس آجائیں گے ، جہاں انہیں شوگر کمیشن سمیت مختلف ایجنسیوں کی جانب سے تیز سوالات پوچھنے کے لئے استقبال کیا جائے گا۔

ابھی کچھ دن پہلے ، جب جہانگیر ترین برطانیہ پہنچے اور ان کی برطانیہ آمد کے بارے میں قیاس آرائیاں شروع ہوئیں تو ان کا کہنا تھا کہ ان کا 2014 سے میڈیکل معائنہ نہیں ہوا ہے اور وہ طبی معائنے کے بعد پاکستان واپس آجائیں گے۔

عام تاثر یہ ہے کہ وہ پاکستان واپس آئیں گے ، لیکن انہوں نے وطن واپسی کے لئے کوئی ٹائم فریم نہیں دیا۔ دوسری جانب شوگر ملز مالکان نے شوگر کمیشن کی رپورٹ کو عدالت میں چیلنج کیا ہے۔

جہاں جہانگیر ترین اپنی وسیع و عریض برطانیہ کی رہائش گاہ پر ہیں ، ان کے مخالفین خصوصا مسلم لیگ (ن) نے ان کے خلاف تنقید اور الزامات کی بارش کردی ہے۔ اسی اثنا میں ، پاکستان تحریکِ انصاف کے کسی رہنما نے اُن کی حمایت نہیں کی ، دوسری جانب پاکستان پیپلز پارٹی نے بھی جہانگیر ترین کے برطانیہ جانے پرالزامات عائد کردیئے ہیں۔

ان الزامات کے علاوہ جہانگیر ترین کو بھی سوشل میڈیا پر تنقیدی تبصروں کے سیلاب کا سامنا کرنا پڑ رہا ہے جس میں سیاسی جماعتوں کے ممبر اور ان کے حامیوں نے بھی حصہ لیا ۔

جہانگیر ترین نے سوشل میڈیا پر لگائے گئے الزامات اور تنقید کا جواب دینا مناسب نہیں سمجھا۔ صرف یہی نہیں ، ان کے بیٹے علی نے بھی اپنے سوشل میڈیا اکاؤنٹ سے کوئی جواب نہیں دیا۔

ISLAMABAD: PTI Jahangir Tareen will return to Pakistan from London, where he will be welcomed by various agencies, including the Sugar Commission, to ask sharp questions.

Just a few days ago, when Jahangir Tareen arrived in the UK and speculations started about his arrival in the UK, he said that he had not undergone a medical examination since 2014 and would return to Pakistan after a medical examination.

The general impression is that he will return to Pakistan, but he did not give any time frame for repatriation. On the other hand, the owners of sugar mills have challenged the report of the Sugar Commission in court.

Where Jahangir Tareen is based in his vast UK residence, his opponents, especially the PML-N, have rained criticism and accusations on him. Meanwhile, no Pakistan Tehreek-e-Insaf (PTI) leader has backed him, while the PPP has also accused Jahangir Tareen of going to the UK.

Apart from these allegations, Jahangir Tareen is also facing a flood of critical comments on social media in which members of political parties and their supporters also took part.

Jahangir Tareen did not consider it appropriate to respond to the allegations and criticism leveled on social media. Not only that, his son Ali also did not respond from his social media account.