Punjab Govt decides to impose heavy fines on those involved in smog

0
665
Punjab Govt decides to impose heavy fines on those involved in smog
Punjab Govt decides to impose heavy fines on those involved in smog

پنجاب حکومت کا سموگ میں ملوث افراد پر بھاری جرمانے عائد کرنے کا فیصلہ

The Punjab government has decided to impose heavy fines on those involved in smog in the province and especially in Lahore.

A meeting of the steering committee for smog was held under the chairmanship of relief commissioner Babar Hayat Tarar in which it was decided that a fine of Rs 100 would be imposed on smog. Smoke-emitting motorcycles and motorcyclists with four-wheelers will be fined Rs 2,000.

In addition, those involved in the use of brick kilns for burning crops or emitting smoke will be fined Rs. 50,000; And a fine of Rs 50,000 was imposed on the factories which emit smoke.

Provincial departments have also been directed to reduce the use of government vehicles by 50% to reduce smog.

In addition, the Steering Committee authorized the Deputy Commissioners to ensure effective implementation of the decisions taken at the meeting.

Earlier, a cabinet body was formed to control the effects of smog in Punjab, which had decided that schools would be closed if the smog situation deteriorated.

حکومت پنجاب نے صوبے اور بالخصوص لاہور میں سموگ کی خرابی میں ملوث افراد کو بھاری جرمانے کا فیصلہ کیا ہے۔

ریلیف کمشنر بابر حیات تارڑ کی سربراہی میں سٹیئرنگ کمیٹی برائے سموگ کا اجلاس ہوا جس میں فیصلہ کیا گیا کہ اسموگ پر 100 روپے جرمانہ عائد کیا جائے گا۔ دھواں چھوڑنے والی موٹرسائیکلوں اور فور وہیلر کے ساتھ موٹر سائیکل چلانے والوں پر 2000 جرمانہ عائد کیا جائے گا۔

مزید برآں، فصل کو جلانے یا دھواں چھوڑنے والے اینٹوں کے بھٹوں کے استعمال میں ملوث افراد کو روپے جرمانہ کیا جائے گا۔ 50,000; اور روپے جرمانہ دھواں چھوڑنے والی فیکٹریوں کو 50 ہزار جرمانے کا فیصلہ کیا گیا۔

صوبائی محکموں کو سموگ میں کمی کے لیے سرکاری گاڑیوں کا استعمال 50 فیصد تک کم کرنے کی بھی ہدایت کی گئی ہے۔

مزید برآں، اسٹیئرنگ کمیٹی نے ڈپٹی کمشنرز کو میٹنگ میں کیے گئے فیصلوں پر موثر عمل درآمد کو یقینی بنانے کا اختیار دیا۔

اس سے قبل پنجاب میں سموگ کے اثرات پر قابو پانے کے لیے کابینہ کی باڈی تشکیل دی گئی تھی، جس نے فیصلہ کیا تھا کہ سموگ کی صورتحال خراب ہونے پر اسکول بند کر دیے جائیں گے۔