Home Pakistan Parliament passed the Mutual Legal Assistance Bill 2020

Parliament passed the Mutual Legal Assistance Bill 2020

پارلیمنٹ نے باہمی قانونی مدد بل 2020 منظور کیا

جمعرات کو پارلیمنٹ کے مشترکہ اجلاس نے باہمی قانونی مدد (مجرمانہ معاملات) بل 2020 منظور کیا۔

اسپیکر اسد قیصر کی زیر صدارت پارلیمنٹ کا مشترکہ اجلاس ہوا۔ پارلیمنٹ کے مشترکہ اجلاس سے قبل حکومت اور اپوزیشن نے باہمی قانونی مدد سے متعلق فوجداری معاملات بل 2020 کے مسودے پر اتفاق کیا جس کے بعد اسے ایوان میں پیش کیا گیا۔

تاہم ، جمعیت علمائے اسلام فضل (جے یو آئ) ، جماعت اسلامی ، پی کے ایم اے پی ، نیشنل پارٹی اور آزاد امیدواروں کے محسن داور اور علی وزیر نے بل کی شدید مخالفت کی اور بل کی پیش کش اور ووٹنگ کے دوران ہنگامہ کھڑا کردیا۔

وزیر قانون برائے قانون نسیم نے شق وار بل کو منظوری کے لئے پیش کیا۔

پاکستان پیپلز پارٹی (پی پی پی) آغا رفیع اللہ نے یہ کہتے ہوئے اپنی ترمیم واپس لے لی کہ ان کی بیشتر ترامیم کو قبول کرلیا گیا ہے۔ جبکہ مسلم لیگ (ن) کے محسن شاہنواز رانجھا نے کہا کہ بل پر ان کے تحفظات پر بڑی حد تک توجہ دی گئی ہے ، لہذا وہ اپنی ترمیم واپس لیتے ہیں۔

قانون کے تحت حکومت کسی ملک سے باہمی قانونی مدد کی درخواست کرنے کے قابل ہو گی تاکہ “گواہوں ، مشتبہ افراد ، مجرموں اور مجرموں کی جگہ اور شناخت کے بارے میں پوچھ گچھ کرے۔ ثبوت یا دستاویزات یا دیگر مضامین تیار ہوئے ہیں۔ اسلامی جمہوریہ پاکستان میں تفتیش یا کارروائی سے متعلق ثبوت کی تلاش کے مجاز تلاشی کے وارنٹ یا دوسرے حلال آلات حاصل کریں ، جو اس ملک میں واقع ہے یا اس ملک کے گھریلو قانون کے تحت جائز سمجھا جاتا ہے اور اگر اسے پایا جاتا ہے تو ان کو جائز سمجھنے کے ل to اس ملک کے ملکی قانون کے تحت؛ جائیدادوں کو منجمد یا ضبط کرنا جو اس ملک میں متعلقہ قانونی عمل کے ذریعہ تفتیش یا کارروائی کا موضوع ہوسکتی ہے۔ اور تحویل میں بیرون ملک مقیم ایک شخص جو اسلامی جمہوریہ پاکستان کو متعلقہ تفتیش یا کارروائی میں اسلامی جمہوریہ پاکستان کی مدد کرنے پر رضامند ہوا۔

دریں اثنا ، پارلیمنٹ کے مشترکہ اجلاس نے بھی متفقہ طور پر ایک قرار داد منظور کی ، جس میں 5 اگست 2019 سے ہندوستانی غیر قانونی طور پر مقبوضہ جموں و کشمیر میں زوردار طور پر بھارت کی غیر قانونی اور یکطرفہ کارروائیوں کو مسترد کردیا گیا۔

وزیر خارجہ شاہ محمود قریشی کی طرف سے پیش کی جانے والی قرارداد میں کہا گیا تھا کہ غیر قانونی اقدامات کا مقصد جموں و کشمیر پر بھارت کے غیر انسانی قبضے کو مستقل کرنے کے لئے ہے۔

قرارداد میں کہا گیا ہے کہ کشمیر بین الاقوامی سطح پر تسلیم شدہ تنازعہ ہے اور اقوام متحدہ کی سلامتی کونسل کے ایجنڈے میں سب سے طویل بقایا شے ہے جس میں واضح طور پر کہا گیا ہے کہ غیر قانونی اقدامات اس علاقے کی متنازعہ حیثیت کو نہیں تبدیل کرسکتے ہیں۔

حق خودارادیت کے لئے اپنی جائز جدوجہد میں کشمیری عوام کی پاکستان کی مکمل حمایت کا اعادہ کرتے ہوئے پارلیمنٹ نے بھارتی حکومت سے مطالبہ کیا کہ وہ فوری طور پر بھارتی غیر قانونی مقبوضہ جموں و کشمیر میں فوجی محاصرے کو ختم کرے اور 5 اگست 2019 کے غیر قانونی اور یکطرفہ اقدامات کو بازیافت کرے۔

قرارداد میں بھارت سے مقبوضہ علاقے کے آبادیاتی ڈھانچے کو تبدیل کرنے کے اپنے غیر قانونی اقدامات بند کرنے کا مطالبہ کیا گیا۔ اس نے ہندوستان سے بھی مطالبہ کیا کہ وہ اس علاقے سے نو لاکھ ہزار فوجیں واپس لے اور کشمیریوں کو ان کا حق خود ارادیت کا حق دے۔

مجلس شوریٰ نے عالمی برادری سے مطالبہ کیا کہ وہ کشمیری عوام کے خلاف انسانی حقوق کی خلاف ورزیوں اور اس کی غیر قانونی اور یکطرفہ کارروائیوں کے لئے بھارت کو جوابدہ بنانے کے لئےتمام تر اوزاروں کو اپنے اختیار میں استعمال کرے۔

اس نے عالمی برادری پر زور دیا کہ وہ بھارت پر دباؤ ڈالے کہ وہ انسانی حقوق کی بین الاقوامی ذمہ داریوں کی پاسداری کرے اور بین الاقوامی میڈیا اور آزاد مبصرین کوبھارتی غیرقانونی مقبوضہ جموں و کشمیر میں کشمیری عوام کے خلاف طاقت اور زیادتی کے زیادہ استعمال کی تحقیقات اور جانچ پڑتال کرنے کی اجازت دے۔

پارلیمنٹ نے بھارت سے مطالبہ کیا کہ وہ مقبوضہ علاقے میں میڈیا ، انٹرنیٹ ، تحریک اور پرامن اسمبلی پر عائد پابندیوں کو ختم کرے ، علاوہ ازیں سخت قانون کو کالعدم قرار دے۔

پارلیمنٹ نے اپنی قرارداد میں بی جے پی حکومت کے دھمکی آمیز بیانات ، سخت بیان بازی اور غیر ذمہ دارانہ انداز پر زور دیا کہ وہ جنوبی ایشیاء میں امن و استحکام کے لئے ایک بہت بڑا خطرہ ہے۔

اس نے اس بات پر زور دیا کہ بی جے پی اور آر ایس ایس کی منتقلی انتہا پسندانہ نظریہ اور ہیجونک ڈیزائن کے زہریلے مرکب سے چلتی ہے جو اس کے زیر قبضہ کشمیریوں کے ساتھ ساتھ اس کی اقلیتوں اور خطے کے امن و استحکام کے لئے خطرہ ہیں۔

At the joint session of Parliament on Thursday, the 2020 Criminal Matters Act was passed.

A joint session of parliament was held under the chairmanship of Speaker Asad Qaiser. Before the joint session of parliament, the government and the opposition agreed on the 2020 draft Law on Mutual Legal Assistance in Criminal Matters 2020, after which it was presented in the House.

Jamiat Ulema-e-Islam-Fazl (JUI-F), Jamaat-e-Islami, PKMAP, members of the National Party and the Independents Mohsin Dawar and Ali Wazir resolutely rejected the bill and took care of the bill’s submission and vote for riot.

Attorney General Forough Naseem submitted the bill by clause for approval.

Agha Rafiullah of the Pakistan Peoples’ Party (PPP) withdrew his amendment, stating that most of their amendments were accepted. While PML-N’s Mohsin Shahnawaz Ranjha said their reservations about the bill were largely taken into account, they are withdrawing their amendments.

Under the law, the government could seek mutual legal assistance from a country “asking for the location and identification of witnesses, suspects, perpetrators and perpetrators; Have evidence or documents or other articles presented; Obtaining search warrants or other lawful instruments authorizing the search for evidence relevant to an investigation or proceeding in the Islamic Republic of Pakistan that is located or deemed permissible under that country’s domestic law and when found, about it to be seized as admissible under the domestic law of that country; Freezing or confiscation of real estate that may be the subject of an investigation or proceeding through relevant legal process in that county; and transfer to the Islamic Republic of Pakistan a person in custody abroad who has agreed to assist the Islamic Republic of Pakistan with the relevant investigations or proceedings. “

In the meantime, Parliament’s joint session also unanimously adopted a resolution rejecting India’s illegal and unilateral actions in illegally occupied Jammu and Kashmir since August 5, 2019.

The resolution tabled by Foreign Minister Shah Mahmood Qureshi states that the illegal actions are aimed at perpetuating the inhumane occupation of Jammu and Kashmir by India.

The resolution states that Kashmir is an internationally recognized dispute and the longest-running item on the UN Security Council’s agenda, which categorically states that illegal action cannot change the disputed status of the territory.

Parliament reaffirmed Pakistan’s full support for the Kashmiri people in their legitimate struggle for the right to self-determination and called on the Indian government to immediately lift the military siege of illegally occupied Indian Jammu and Kashmir and the illegal and unilateral actions of August 5, 2019 cancel.

The resolution called on India to end its illegal measures to change the demographic structure of the occupied territory. She also called on India to withdraw nine hundred thousand soldiers from its territory and give Kashmir its inalienable right of self-determination.

The Majlis-e-Shoora called on the international community to use all instruments at its disposal to hold India accountable for its illegal and unilateral actions and human rights violations against the Kashmiri people.

She called on the international community to pressure India to comply with its international human rights obligations and to give international media and independent observers access to illegally occupied India’s Jammu and Kashmir to investigate and investigate the excessive use of force and violence against the Kashmiri people to investigate.

Parliament called on India to lift restrictions on media, internet, movement and peaceful assembly in the occupied territory and repeal the draconian law.

In its resolution, the Parliament emphasized the threatening statements of the BJP government, the bellicose rhetoric and irresponsible attitude pose a serious threat to peace and stability in South Asia.

It was underlined that the BJP RSS dispensation is being driven by a toxic mix of extremist ideology and hegemonic schemes that pose a threat to the Kashmiris under their occupation, as well as to their minorities and the peace and stability of the region.

Most Popular

Sindh Emergency Rescue 1122 Jobs 2022 PTS Application Form

Sindh Emergency Rescue Service 1122 is seeking applications from experienced and energetic candidates for Rescue 1122 Sindh Jobs 2022 against the vacant...

200 Rs Prize Bond Draw List 90 Multan Result 2022

Multan, As per the Prize Bond Schedule 2022 issued by the National Savings of Pakistan, The 90th draw of Rs 200 Prize Bond List 2022 is held...

25000 Rs Premium Prize Bond List 10 June 2022 Hyderabad

Hyderabad, 25000 Rs Premium Prize Bond Draw List 6 winners 2022 has announced at Hyderabad on 10 June, 2022, this is the 25000 Rs...

40000 Rs Premium Prize Bond List 21 10 June 2022 Muzaffarabad Winner List

Muzaffarabad, 40000 Rs Premium Prize Bond Draw winners 2022 has announced at Muzaffarabad on June 10, 2022, this is the 40000 Rs Premium Prize...

Recent Comments