Government of Punjab decides to amend the law for use of EVM in local body elections

0
562
Government of Punjab decides to amend the law for use of EVM in local body elections
Government of Punjab decides to amend the law for use of EVM in local body elections

حکومت پنجاب نے بلدیاتی انتخابات میں ای وی ایم کے استعمال کے قانون میں ترمیم کا فیصلہ کر لیا

The Punjab government has announced its plan to introduce Electronic Voting Machine (EVM) in the upcoming local body elections.

According to the report, the Punjab government has taken a stand that the federal government has already enacted legislation and has made the use of EVM mandatory in all future elections.

In this regard, the Punjab government has managed to allay the reservations of its ally PML-Q regarding the Local Government (Amendment) Act (PLGA) 2021.

A senior government official said that the federal government has enacted legislation that all future elections, including by-elections, will be held through EVM, so how can Punjab deviate from this law?

He further said that the Punjab government now desperately wants the provision regarding use of EVM in all upcoming elections to be included in PLGA 2021, which is currently in the final stages.

He said that the federal government has already asked the Election Commission of Pakistan (ECP) to conduct all subsequent elections, including by-elections, through EVMs.

Federal Minister for Information Fawad Chaudhry had also hinted that the government would not provide funds to the Election Commission if it did not conduct elections through EVM.

Meanwhile, the commission asked the Punjab government to submit a draft of the amended PLGA 2021 within a week, otherwise LG elections would be held as per the law.

An ECP official explained that the ECP intends to redefine constituencies in accordance with the amended draft law, otherwise it would hold elections according to the old delimitation of LG constituencies. Will be forced.

Opposition parties, however, vehemently rejected the Punjab government’s plan to bulldoze all important legislation.

He said that PLGA 2021 was being passed in an undemocratic manner as no stakeholder had been consulted.

Even the PML-Q, an ally of the PTI, had earlier raised objections and its minister Muhammad Rizwan had left the Punjab cabinet meeting expressing his displeasure that his party had not been consulted.

Punjab Governor Chaudhry Sarwar is currently out of the country and Punjab Assembly Speaker Chaudhry Pervaiz Elahi is taking over the acting charge of the governor, so he sought a briefing on the proposed amendments in PLGA 2021.

PML-Q Punjab President Pervez Elahi had demanded that tehsil councils be made part of the local government system and also eligibility requirements for mayors and district council chairmen be fixed.

The Chief Minister directed to continue consultations with the PML-Q and remove their objections.

He added that the new LG Act has been drafted through consultation and hard work to empower the lower castes.

Sources claimed that the Punjab government delegation once again met Pervez Elahi and assured him that Tehsil Councils could not be included in the law.

On the objection that at least intermediate education should be made compulsory for the mayor and chairman of the district council, the delegation informed the acting governor that the qualification aspect could not be included as there is no such requirement for a member of the Provincial and National Assembly. Is.

Reacting to the proposed amendments to the law, PML-N Punjab Information Secretary Azmi Bukhari said that the PTI government did not bother to consult the opposition parties during the preparation of all important laws.

He said that the government was enacting legislation through special committees while debate was not allowed in the Punjab Assembly.

Azmi Bukhari said that I was suspended from the assembly session when I tried to discuss the proposed law till the end of last financial year.

Regarding the Punjab government’s plan to make the use of EVMs mandatory in the next elections, he said who are the ones who decide how to conduct the elections? This is the sole mandate of the ECP.

PPP parliamentary leader Hassan Murtaza said the ruling PTI had always “legislated” without consulting stakeholders.

On the other hand, PML-Q Punjab Information Secretary Mian Imran Masood said that his party had accepted the government’s proposal to use EVMs in the elections after talks with the ruling party PTI. The joint meeting had to be briefly adjourned due to concerns.

However, the Usman Bazdar administration, reluctant to comply with the Supreme Court’s order in October, restored local governments in the province. The term of the current local government expires on December 31.

پنجاب حکومت نے آئندہ بلدیاتی انتخابات میں الیکٹرانک ووٹنگ مشین (ای وی ایم) متعارف کرانے کے منصوبے کا اعلان کر دیا۔

رپورٹ کے مطابق پنجاب حکومت نے موقف اختیار کیا ہے کہ وفاقی حکومت پہلے ہی قانون سازی کر چکی ہے اور آئندہ تمام انتخابات میں ای وی ایم کے استعمال کو لازمی قرار دے دیا ہے۔

اس سلسلے میں، پنجاب حکومت نے لوکل گورنمنٹ (ترمیمی) ایکٹ (پی ایل جی اے) 2021 کے حوالے سے اپنی اتحادی جماعت مسلم لیگ (ق) کے تحفظات دور کرنے میں کامیاب ہو گئی ہے۔

ایک سینئر سرکاری اہلکار نے بتایا کہ وفاقی حکومت نے قانون سازی کی ہے کہ آئندہ تمام انتخابات بشمول ضمنی انتخابات ای وی ایم کے ذریعے ہوں گے تو پنجاب اس قانون سے کیسے انحراف کرسکتا ہے۔

انہوں نے مزید کہا کہ پنجاب حکومت اب شدت سے چاہتی ہے کہ آئندہ تمام انتخابات میں ای وی ایم کے استعمال سے متعلق شق کو پی ایل جی اے 2021 میں شامل کیا جائے جو کہ اس وقت آخری مراحل میں ہے۔

انہوں نے کہا کہ وفاقی حکومت نے پہلے ہی الیکشن کمیشن آف پاکستان سے کہا ہے کہ وہ آئندہ تمام انتخابات بشمول ضمنی انتخابات ای وی ایم کے ذریعے کرائے ۔

وفاقی وزیر اطلاعات فواد چوہدری نے بھی عندیہ دیا تھا کہ حکومت الیکشن کمیشن کو ای وی ایم کے ذریعے انتخابات نہ کرانے پر فنڈز فراہم نہیں کرے گی۔

دریں اثنا، کمیشن نے پنجاب حکومت سے کہا کہ وہ ایک ہفتے کے اندر ترمیم شدہ پی ایل جی اے 2021 کا مسودہ پیش کرے، بصورت دیگر ایل جی کے انتخابات قانون کے مطابق کرائے جائیں گے۔

ای سی پی کے ایک اہلکار نے وضاحت کی کہ ای سی پی ترمیم شدہ مسودہ قانون کے مطابق حلقہ بندیوں کی از سر نو وضاحت کرنے کا ارادہ رکھتا ہے، بصورت دیگر یہ ایل جی حلقوں کی پرانی حد بندی کے مطابق انتخابات کرائے گا۔ مجبور ہوں گے۔

تاہم اپوزیشن جماعتوں نے پنجاب حکومت کے تمام اہم قانون سازی کو بلڈوز کرنے کے منصوبے کو سختی سے مسترد کر دیا۔

انہوں نے کہا کہ پی ایل جی اے 2021 کو غیر جمہوری طریقے سے پاس کیا جا رہا ہے کیونکہ کسی اسٹیک ہولڈر سے مشاورت نہیں کی گئی۔

یہاں تک کہ پی ٹی آئی کی اتحادی مسلم لیگ (ق) نے بھی پہلے اعتراضات اٹھائے تھے اور اس کے وزیر محمد رضوان پنجاب کابینہ کے اجلاس سے ناراضگی کا اظہار کرتے ہوئے چلے گئے تھے کہ ان کی جماعت سے مشاورت نہیں کی گئی۔

گورنر پنجاب چوہدری سرور اس وقت ملک سے باہر ہیں اور پنجاب اسمبلی کے اسپیکر چوہدری پرویز الٰہی گورنر کا قائم مقام چارج سنبھال رہے ہیں، اس لیے انہوں نے پی ایل جی اے 2021 میں مجوزہ ترامیم پر بریفنگ طلب کی۔

مسلم لیگ (ق) پنجاب کے صدر پرویز الٰہی نے مطالبہ کیا تھا کہ تحصیل کونسلوں کو بلدیاتی نظام کا حصہ بنایا جائے اور میئرز اور ضلع کونسل کے چیئرمینوں کے لیے اہلیت کی شرائط بھی طے کی جائیں۔

وزیراعلیٰ نے مسلم لیگ (ق) سے مشاورت جاری رکھنے اور ان کے اعتراضات دور کرنے کی ہدایت کی۔

انہوں نے مزید کہا کہ نیا ایل جی ایکٹ نچلی ذاتوں کو بااختیار بنانے کے لیے مشاورت اور محنت کے ذریعے تیار کیا گیا ہے۔

ذرائع نے دعویٰ کیا کہ پنجاب حکومت کے وفد نے ایک بار پھر پرویز الٰہی سے ملاقات کی اور انہیں یقین دلایا کہ تحصیل کونسلز کو قانون میں شامل نہیں کیا جا سکتا۔

اس اعتراض پر کہ میئر اور ضلع کونسل کے چیئرمین کے لیے کم از کم انٹرمیڈیٹ تعلیم لازمی قرار دی جائے، وفد نے قائم مقام گورنر کو بتایا کہ اہلیت کا پہلو شامل نہیں کیا جا سکتا کیونکہ صوبائی اور قومی اسمبلی کے ممبر کے لیے ایسی کوئی شرط نہیں ہے۔ اسمبلی ہے

قانون میں مجوزہ ترامیم پر ردعمل کا اظہار کرتے ہوئے مسلم لیگ (ن) پنجاب کی سیکرٹری اطلاعات عظمیٰ بخاری نے کہا کہ پی ٹی آئی حکومت نے تمام اہم قوانین کی تیاری کے دوران اپوزیشن جماعتوں سے مشاورت کرنے کی زحمت نہیں کی۔

انہوں نے کہا کہ حکومت خصوصی کمیٹیوں کے ذریعے قانون سازی کر رہی ہے جبکہ پنجاب اسمبلی میں بحث کی اجازت نہیں دی گئی۔

عظمیٰ بخاری نے کہا کہ مجھے اسمبلی اجلاس سے اس وقت معطل کر دیا گیا جب میں نے گزشتہ مالی سال کے آخر تک مجوزہ قانون پر بحث کرنے کی کوشش کی۔

پنجاب حکومت کے اگلے انتخابات میں ای وی ایم کے استعمال کو لازمی قرار دینے کے منصوبے کے بارے میں انہوں نے کہا کہ انتخابات کے انعقاد کا فیصلہ کون کرتے ہیں؟ یہ ای سی پی کا واحد مینڈیٹ ہے۔

پی پی پی کے پارلیمانی لیڈر حسن مرتضیٰ نے کہا کہ حکمران پی ٹی آئی نے ہمیشہ اسٹیک ہولڈرز سے مشاورت کے بغیر قانون سازی کی ہے۔

دوسری جانب مسلم لیگ (ق) پنجاب کے سیکرٹری اطلاعات میاں عمران مسعود نے کہا کہ ان کی جماعت نے حکمران جماعت پی ٹی آئی سے بات چیت کے بعد انتخابات میں ای وی ایم کے استعمال کی حکومتی تجویز کو قبول کر لیا ہے۔ تحفظات کے باعث مشترکہ اجلاس کچھ دیر کے لیے ملتوی کرنا پڑا۔

تاہم عثمان بزدار انتظامیہ نے اکتوبر میں سپریم کورٹ کے حکم کی تعمیل کرنے سے گریزاں ہوتے ہوئے صوبے میں مقامی حکومتیں بحال کر دیں۔ موجودہ مقامی حکومت کی مدت 31 دسمبر کو ختم ہو رہی ہے۔