Home World Tik Tak Refused To Share Indian User Data With The Chinese Government

Tik Tak Refused To Share Indian User Data With The Chinese Government

ٹک ٹاک نے چینی حکومت کے ساتھ بھارتی صارف کا ڈیٹا سئیرکرنے سے انکار کر دیا

بیجنگ کے ساتھ تعلقات میں شدید خرابی کی وجہ سے ایک مہلک سرحدی تنازعہ کے دو ہفتوں بعد نئی دہلی نے زبردست مقبول ایپ پر پابندی عائد کرنے کے بعد منگل کے روز ، چینی صارفین کو بھارتی صارفین کے اعداد و شمار جاری کرنے سے انکار کردیا۔

ٹک ٹاک انڈیا کے سربراہ نکھل گاندھی نے ایک بیان میں کہا ، “ٹک ٹاک نے بھارتی قانون کے تحت تمام رازداری اور سلامتی کی ضروریات کو پورا کرنا جاری رکھا ہے اور انہوں نے ہندوستان میں موجود اپنے صارفین سے چینی حکومت سمیت کسی غیر ملکی حکومت کے ساتھ معلومات شیئر نہیں کی ہیں۔”

اگر ہمیں مستقبل میں ایسا کرنے کے لئے کہا گیا تو ہم ایسا نہیں کریں گے۔ “ہم صارفین کی رازداری اور سالمیت کو بہت اہمیت دیتے ہیں ،” انہوں نے کہا ، انہوں نے مزید کہا کہ انہیں ہندوستانی حکومت کے ساتھ ایک میٹنگ میں مدعو کیا گیا تھا ، “تاکہ جواب دینے اور وضاحت پیش کرنے کا موقع ملے۔”

ٹک ٹاک چین کے بائٹ ڈانس کی ملکیت ہے اور 59 چینی موبائل ایپس میں سے ایک تھی جس پر پیر کی رات وزیر اعظم نریندر مودی کی حکومت کی جانب سے پابندی عائد کی گئی ۔

ایک اندازے کے مطابق بھارت میں ٹِک ٹاک کے تقریباً 120 ملین صارف موجود ہیں ، جس سے 1.3 بلین باشندوں کی جنوبی ایشیائی ملک سب سے بڑی بین الاقوامی ایپلی کیشن مارکیٹ ہے۔

بھارتی وزارتِ انفارمیشن ٹکنالوجی نے کہا کہ ایپس “ایسی سرگرمیوں میں ملوث ہیں جو بھارت کی خودمختاری اور سالمیت ، بھارت کے دفاع ، ریاست کی حفاظت اور عوامی نظم و ضبط سے سمجھوتہ کرتی ہیں۔”

یہ اعلان 15 جون کو 45 برسوں میں ان کے متنازعہ ہمالیائی سرحد پر چینی فوجیوں کے ساتھ جھڑپوں میں 20 بھارتی فوجیوں کی ہلاکت کے بعد سامنے آیا ہے۔ چینی متاثرین نامعلوم ہیں۔

باہمی تقویت کے دوران ، ایٹمی ہتھیاروں سے لیس ایشیائی باشندوں نے لداخ اور تبت کے درمیان ہزاروں اضافی فوجی دستوں ، طیاروں اور آلات کی مدد سے سرحد کو مستحکم کیا ہے۔

ان اموات نے سوشل میڈیا پر غم و غصے کو جنم دیا ہے اور چینی سامان کا بائیکاٹ کرنے کا مطالبہ کیا ہے۔ بکھرے ہوئے سڑکوں پر ہونے والے احتجاج کے دوران چینی جھنڈوں کو نذر آتش کیا گیا۔

گذشتہ ہفتے دہلی کی ایک بڑی ہوٹل ایسوسی ایشن نے اعلان کیا تھا کہ اس کے ممبران چینی مہمانوں کو خارج کردیں گے اور چین میں تیار کردہ مصنوعات کا استعمال بند کردیں گے۔

چینی الیکٹرانکس کمپنیوں کی بھی بھارت میں نمائندگی کی جاتی ہے۔ ژیومی اور اوپو جیسے موبائل فون برانڈز کا مارکیٹ شیئر تقریبا 65 فیصد ہے۔

میڈیا رپورٹس کے مطابق ، ای کامرس کمپنیاں جیسا کہ امریکی کمپنی ایمیزون ، جو بڑی تعداد میں چینی آلات فروخت کرتا ہے ، نے اپنے پلیٹ فارم پر سامان کی اصل ملک کو ظاہر کرنے پر اتفاق کیا ہے۔

مودی سرکار نے تمام دکانداروں کو بھی ان کے جییم پورٹل پر ایسا ہی کرنے کا حکم دیا ہے ، جو سرکاری خریداری میں دسیوں ارب ڈالر میں استعمال ہوتا ہے۔

چین میں تیار کردہ سامان ، کچھ خام مال سمیت جو بھارتی دوا ساز کمپنیوں کے لئے اہم ہیں ، سخت کسٹم کنٹرول کے باعث ہندوستانی بندرگاہوں اور ہوائی اڈوں پر بھی انبار لگارہے ہیں۔

طویل تعلقات کے باوجود ، ہندوستان اور چین نے حالیہ برسوں میں مضبوط معاشی تعلقات استوار کیے ہیں۔

سالانہ دوطرفہ تجارت 90 بلین ڈالر کے لگ بھگ ہے ، اور اس کا خسارہ تقریبا 50 ارب ڈالر چین کے حق میں ہے۔

New Delhi on Tuesday refused to release data on Indian users to Chinese users after New Delhi banned the hugely popular app two weeks after a deadly border dispute over its strained relations with Beijing.

Nikhal Gandhi, head of Tik Tak India, said in a statement, “Tik Tak has continued to meet all privacy and security requirements under Indian law and has not allowed its customers in India to contact any foreign government, including the Chinese government. Have not shared information with. “

If we were asked to do this in the future, we would not do it. “We attach great importance to the privacy and integrity of consumers,” he said, adding that he had been invited to a meeting with the Indian government, “to give an opportunity to respond and explain.”

Tik Tak is owned by Chinese Byte Dance and was one of 59 Chinese mobile apps that were banned by Prime Minister Narendra Modi’s government on Monday night.

India has an estimated 120 million TikTak users, making South Asia the largest international application market with a population of 1.3 billion.

The Indian Ministry of Information Technology said the apps were “involved in activities that compromise India’s sovereignty and integrity, India’s defense, state security and public order.”

The announcement comes on June 15 after 20 Indian soldiers were killed in clashes with Chinese troops on their disputed Himalayan border in 45 years. The Chinese victims are unknown.

In the process of strengthening each other, the nuclear-armed Asians have strengthened the border between Ladakh and Tibet with the help of thousands of additional troops, planes and equipment.

The deaths have sparked outrage on social media and called for a boycott of Chinese goods. Chinese flags were set on fire during the scattered street protests.

Last week, a major Delhi hotel association announced that its members would expel Chinese guests and stop using Chinese-made products.

Chinese electronics companies are also represented in India. Mobile phone brands such as Xiaomi and Oppo have a market share of about 65%.

According to media reports, e-commerce companies such as the US company Amazon, which sells a large number of Chinese devices, have agreed to reveal the country of origin of the goods on their platforms.

The Modi government has ordered all vendors to do the same on their GM portal, which is used in government procurement for tens of billions of dollars.

Chinese-made goods, including some raw materials that are important to Indian pharmaceutical companies, are also being stockpiled at Indian ports and airports due to strict customs controls.

Despite long-standing ties, India and China have forged strong economic ties in recent years.

Annual bilateral trade is about 90 billion, with a deficit of about 50 billion in favor of China.

LEAVE A REPLY

Please enter your comment!
Please enter your name here

Most Popular

Two fake doctors arrested in Faisalabad’s Tandliwala

فیصل آباد کے ٹنڈلی والا میں دو جعلی ڈاکٹر گرفتار محکمہ صحت پنجاب اور ضلعی انتظامیہ کی...

Good News for Mungu Lovers

منگو سے محبت کرنے والوں کے لئے خوشخبری منگو کے مداحوں کے لئے خوشخبری یہ ہے...

Gujranwala’s lawyer beat drivers and assistants with sticks after an accident

گوجرانوالہ کے وکیل نے حادثے کے بعد ڈرائیور اور مددگار کو ڈنڈوں سے پیٹا پولیس کے مطابق...

Public demand to end K-Electric after night-long load-shedding

رات بھر لوڈشیڈنگ کے بعد کے الیکٹرک کو ختم کرنے کا عوامی مطالبہ کراچی میں غیر اعلانیہ...

Recent Comments