Home World Taliban government does not reflect all groups in Afghan society: Russia

Taliban government does not reflect all groups in Afghan society: Russia

طالبان حکومت افغان معاشرے کے تمام گروہوں کی عکاسی نہیں کرتی: روس

Russian Foreign Minister Sergei Lavrov has said that the interim government announced by the Taliban does not reflect “all groups of Afghan society, ethnic, religious and political forces”, so we are in touch.

According to the Associated Press, he said that Russia, China, Pakistan and the United States are working together to ensure that Afghanistan’s new Taliban ruler, in particular, was a true representative. Keep your promises to form a government and stop the spread of extremism.

Russian Foreign Minister Sergei Lavrov said that the four countries are in touch.

It should be noted that the Taliban promised to form a more liberal and comprehensive government than their predecessors from 1996 to 2001, which would respect women’s rights.

However, his recent work gives the impression that he is returning to more repressive policies, especially towards women and girls.

“The most important thing is to ensure that the promises made publicly by the Taliban are fulfilled and that is our first priority,” he said.

In a press conference after his speech at the United Nations General Assembly, the Russian foreign minister covered a range of issues criticizing the US president for his hasty withdrawal from Afghanistan.

He said that the United States and NATO retreated without thinking about the possible consequences that there are many weapons left in Afghanistan, it is important that these weapons are not used for sabotage.

According to a report by the British news agency Reuters, the Russian foreign minister said that at present the international recognition of the Taliban is not being considered.

“The issue of international recognition of the Taliban is not currently under consideration,” he said.

The Russian foreign minister’s statement comes after the Taliban nominated Afghanistan for a seat in the United Nations.

Also read: Taliban did not form a comprehensive government, there will be civil war in Afghanistan, Prime Minister

Taliban Foreign Minister Amir Khan Mottaki named Sohail Shaheen, the spokesman for the group’s political office, as Afghanistan’s envoy to the United Nations.

Russia is a member of the nine-member UN Certification Committee, which will decide on Afghanistan’s competing claims at a subsequent UN meeting, which also includes China and the United States.

UN Secretary-General Antonio Guterres said the Taliban’s desire for international recognition was the only reason it could pressure other countries to respect a wider government and rights, especially women’s rights, in Afghanistan.

روسی وزیر خارجہ سرگئی لاوروف نے کہا ہے کہ طالبان کی طرف سے اعلان کردہ عبوری حکومت “افغان معاشرے کے تمام گروہوں ، نسلی ، مذہبی اور سیاسی قوتوں” کی عکاسی نہیں کرتی ، اس لیے ہم رابطے میں ہیں۔

ایسوسی ایٹڈ پریس کے مطابق ، انہوں نے کہا کہ روس ، چین ، پاکستان اور امریکہ مل کر کام کر رہے ہیں تاکہ یہ یقینی بنایا جا سکے کہ افغانستان کا نیا طالبان حکمران ، خاص طور پر ، ایک حقیقی نمائندہ تھا۔ حکومت بنانے اور انتہا پسندی کے پھیلاؤ کو روکنے کے اپنے وعدے پورے کریں۔

روسی وزیر خارجہ سرگئی لاوروف نے کہا کہ چاروں ممالک رابطے میں ہیں۔

واضح رہے کہ طالبان نے 1996 سے 2001 تک اپنے پیشروؤں سے زیادہ آزاد خیال اور جامع حکومت بنانے کا وعدہ کیا تھا جو خواتین کے حقوق کا احترام کرے گی۔

تاہم ، اس کا حالیہ کام یہ تاثر دیتا ہے کہ وہ زیادہ جابرانہ پالیسیوں کی طرف لوٹ رہا ہے ، خاص طور پر خواتین اور لڑکیوں کی طرف۔

انہوں نے کہا کہ سب سے اہم بات یہ ہے کہ اس بات کو یقینی بنایا جائے کہ طالبان کی طرف سے عوامی طور پر کیے گئے وعدے پورے ہوں اور یہ ہماری پہلی ترجیح ہے۔

اقوام متحدہ کی جنرل اسمبلی میں اپنی تقریر کے بعد ایک پریس کانفرنس میں روسی وزیر خارجہ نے امریکی صدر کی افغانستان سے جلد بازی پر تنقید کرنے والے کئی مسائل کا احاطہ کیا۔

انہوں نے کہا کہ امریکہ اور نیٹو ممکنہ نتائج کے بارے میں سوچے بغیر پیچھے ہٹ گئے کہ افغانستان میں بہت سے ہتھیار باقی ہیں ، یہ ضروری ہے کہ یہ ہتھیار تخریب کاری کے لیے استعمال نہ ہوں۔

برطانوی خبر رساں ادارے روئٹرز کی رپورٹ کے مطابق روسی وزیر خارجہ نے کہا کہ اس وقت طالبان کی بین الاقوامی پہچان پر غور نہیں کیا جا رہا۔

انہوں نے کہا ، “طالبان کی بین الاقوامی پہچان کا مسئلہ فی الحال زیر غور نہیں ہے۔”

روسی وزیر خارجہ کا یہ بیان طالبان کی جانب سے اقوام متحدہ کی ایک نشست کے لیے افغانستان کی نامزدگی کے بعد سامنے آیا ہے۔

طالبان کے وزیر خارجہ عامر خان متقی نے گروپ کے سیاسی دفتر کے ترجمان سہیل شاہین کو اقوام متحدہ میں افغانستان کا سفیر نامزد کیا۔

روس اقوام متحدہ کی نو رکنی سرٹیفیکیشن کمیٹی کا رکن ہے ، جو اقوام متحدہ کے بعد کے اجلاس میں افغانستان کے مسابقتی دعووں کا فیصلہ کرے گی ، جس میں چین اور امریکہ بھی شامل ہیں۔

اقوام متحدہ کے سیکریٹری جنرل انتونیو گوتریس نے کہا کہ طالبان کی بین الاقوامی شناخت کی خواہش ہی واحد وجہ ہے کہ وہ دوسرے ممالک پر دباؤ ڈال سکتی ہے کہ وہ افغانستان میں وسیع حکومت اور حقوق بالخصوص خواتین کے حقوق کا احترام کریں۔

LEAVE A REPLY

Please enter your comment!
Please enter your name here

Most Popular

Nationwide protests against inflation

مہنگائی کے خلاف ملک گیر مظاہرے The Pakistan Democratic Movement (PDM), an alliance of opposition parties, and the...

The rivalry between Pakistan and India is incomparable: Matthew Hayden

پاکستان اور بھارت کی دشمنی بے مثال ہے: میتھیو ہیڈن Matthew Hayden said that rivalry between Pakistan and...

Salman Butt Scores most runs in single T20 World Cup.

سلمان بٹ نے سنگل ٹی 20 ورلڈ کپ میں سب سے زیادہ رنز بنائے The Super 12 leg...

You Should leave Pakistan: CM Sind Burst on PM

آپ پاکستان چھوڑ دیں: وزیراعلیٰ سندھ وزیراعظم پر پھٹ پڑے Reacting to the rising prices on PTI, Sindh...

Recent Comments