Home World Secret Talks Revealed Between Israel and Saudi Arabia to keep Turkey away...

Secret Talks Revealed Between Israel and Saudi Arabia to keep Turkey away from Occupied Jerusalem

The Israeli newspaper has revealed that secret talks are taking place between Saudi Arabia and Israel aimed at controlling Islamic property in occupied Jerusalem under Saudi control, but Israeli officials have denied any such talks. The Gulf newspaper reports that the talks between the two countries began at the diplomatic level and included a high-level Israeli security team, US officials and Saudi officials. The agreement that is being sought through these negotiations is being called the historic agreement of the century.

The report further revealed that Jordan had strongly opposed any change in the Islamic Adoment Council at Al-Aqsa Mosque, due to Turkey’s growing role in the holy site. According to the report, the Jordanian team opposed the expansion of the Islamic Endowment Council after the unrest at Bab al-Rahma and the 2017 metal detector crisis, and unanimously agreed to go against the Oslo Accords. That Palestinian representatives be included in the council.

The report accuses the Palestinian delegation of trying to gain a foothold in the Al-Aqsa Mosque by receiving millions of dollars in donations from the Turkish government through various organizations. These organizations had clear orders from Turkish President Recep Tayyip Erdogan.

اسرائیل اور سعودی عرب کے مابین ترکی کو مقبوضہ بیت المقدس سے دور رکھنے کے لئے خفیہ مذاکرات کا انکشاف

اسرائیلی اخبار نے انکشاف کیا ہے کہ سعودی عرب اور اسرائیل کے مابین خفیہ بات چیت ہو رہی ہے جس کا مقصد مقبوضہ بیت المقدس میں اسلامی املاک کو سعودی کنٹرول میں رکھنا ہے ، لیکن اسرائیلی حکام نے ایسی کسی بھی گفتگو سے انکار کیا ہے۔ خلیجی اخبار نے بتایا ہے کہ دونوں ممالک کے مابین بات چیت سفارتی سطح پر شروع ہوئی تھی اور اس میں اسرائیل کی ایک اعلی سطح کی ٹیم ، امریکی عہدیدار اور سعودی عہدیدار شامل تھے۔ ان معاہدوں کے ذریعے جو معاہدہ طے کیا جارہا ہے اسے صدی کا تاریخی معاہدہ کہا جارہا ہے۔

اس رپورٹ میں مزید انکشاف کیا گیا ہے کہ مقدس مقام میں ترکی کے بڑھتے ہوئے کردار کی وجہ سے اردن نے مسجد اقصیٰ میں اسلامی ایڈومنٹ کونسل میں کسی تبدیلی کی شدید مخالفت کی ہے۔ رپورٹ کے مطابق ، اردن کی ٹیم نے باب الرحمہ میں بدامنی اور 2017 میٹل ڈیٹیکٹر بحران کے بعد اسلامی اوقاف کونسل کی توسیع کی مخالفت کی تھی ، اور متفقہ طور پر اوسلو معاہدوں کے خلاف جانے پر اتفاق کیا تھا کہ فلسطینی نمائندوں کو کونسل میں شامل کیا جائے۔

اس رپورٹ میں فلسطینی وفد پر الزام عائد کیا گیا ہے کہ وہ مختلف تنظیموں کے ذریعہ ترک حکومت کی طرف سے کروڑوں ڈالر کا عطیہ وصول کرکے مسجد اقصیٰ میں قدم جمانے کی کوشش کر رہی ہے۔ ان تنظیموں کے متعلق ترک صدر رجب طیب اردوان کے واضح احکامات تھے۔

LEAVE A REPLY

Please enter your comment!
Please enter your name here

Most Popular

FATF decides to keep Pakistan on gray list

ایف اے ٹی ایف کا پاکستان کو گرے لسٹ میں رکھنے کا فیصلہ The Financial Action Task Force...

Sri Lanka Reached Super 12 defeating Ireland in T20 World Cup

سری لنکا نے ٹی 20 ورلڈ کپ میں آئرلینڈ کو شکست دے کر سپر 12 تک رسائی حاصل کرلی

Senate committee summoned the Finance Adviser and the Governor SBP on inflation

سینیٹ کمیٹی نے مہنگائی پر مشیر خزانہ اور گورنر اسٹیٹ بینک کو طلب کر لیا Taking note of...

Rupee hits new low against US dollar

امریکی ڈالر کے مقابلے میں روپیہ تاریخ کی نئی گراوٹ ریکارڈ The Pakistani rupee hit a new record...

Recent Comments