Once again rupee strengthened against the dollar.

0
702
Once again rupee strengthened against the dollar.
Once again rupee strengthened against the dollar.

ایک بار پھر ڈالر کے مقابلے روپیہ مضبوط ہوگیا

Despite fluctuations in the value of the dollar due to sustained demand in the interbank market, the rupee strengthened against the dollar in both the foreign exchange markets on Monday, pushing the dollar’s open rate below Rs 179.

After the State Bank of Pakistan received 3 3 billion from Saudi Arabia, the country’s total foreign exchange reserves exceeded 25 25.49 billion, which had a positive effect on both the foreign exchange markets.

At the start of trading, the dollar rose by 19 paise to Rs 176.95 in the interbank market at one point, but the dollar depreciated shortly after due to a drop in demand. 176.14.

However, at the close of trading, the dollar lost 29 paise to close at Rs 176.46 on the Interbank Foreign Exchange market, while the dollar lost one rupee to close at Rs 178.50 in the open currency market.

It should be noted that after receiving Saudi funds, the government’s foreign exchange reserves exceeded 19 19 billion, which will be enough to pay the two-and-a-half month import bill.

انٹربینک مارکیٹ میں مسلسل طلب کی وجہ سے ڈالر کی قدر میں اتار چڑھاؤ کے باوجود، پیر کو دونوں فارن ایکسچینج مارکیٹوں میں ڈالر کے مقابلے روپے کی قدر مضبوط ہوئی، جس سے ڈالر کی اوپن ریٹ 179 روپے سے نیچے آ گئی۔

اسٹیٹ بینک آف پاکستان کو سعودی عرب سے 3 ارب ڈالر ملنے کے بعد ملک کے مجموعی زرمبادلہ کے ذخائر 25 ارب 49 کروڑ ڈالر سے تجاوز کرگئے جس کے دونوں زرمبادلہ کی منڈیوں پر مثبت اثرات مرتب ہوئے۔

کاروبار کے آغاز پر ایک موقع پر انٹربینک مارکیٹ میں ڈالر 19 پیسے مہنگا ہو کر 176.95 روپے پر پہنچ گیا تاہم طلب میں کمی کے باعث کچھ ہی دیر بعد ڈالر کی قدر میں کمی ہوئی۔ 176.14۔

تاہم کاروبار کے اختتام پر انٹربینک فارن ایکسچینج مارکیٹ میں ڈالر کی قدر 29 پیسے کم ہوکر 176.46 روپے پر بند ہوئی جبکہ اوپن کرنسی مارکیٹ میں ڈالر ایک روپے کی کمی سے 178.50 روپے پر بند ہوا۔

واضح رہے کہ سعودی فنڈز ملنے کے بعد حکومت کے زرمبادلہ کے ذخائر 19 ارب ڈالر سے تجاوز کر گئے جو ڈھائی ماہ کے درآمدی بل کی ادائیگی کے لیے کافی ہوں گے۔