Govt Decides to change the formula for determining the rate of inflation

0
697
Govt Decides to change the formula for determining the rate of inflation
Govt Decides to change the formula for determining the rate of inflation

حکومت کا مہنگائی کی شرح کے تعین کے فارمولے میں تبدیلی کا فیصلہ

The federal government has decided in principle to change the formula for determining the rate of inflation in the country, for which the Bureau of Statistics has started preliminary work.

The new formula for determining the rate of inflation will change the ratio and weightage of items included in the basket designed to measure the rate of inflation for the Consumer Price Index (CPI) and Sensitive Price Index (SPI). The price ratio of the items included in the basket and the ratio of the population as well as the weightage of the items will be reviewed.

Sources said that the new formula should also review the population of rural and urban areas and their share in GDP and inflation in the basket of areas which are not in proportion to the population and in determining the ratio of inflation. A slight and unrealistic difference will be found. This difference should be removed.

According to sources, the population of Karachi, which is included in the inflation basket, is about 10% of the country’s population, while Karachi is 40% for measuring inflation.

In this regard, a senior official of the Bureau of Statistics said that the formula for determining the rate of inflation has to be reviewed every ten years and a new formula has to be introduced. At present, the basic year for determining the rate of inflation is 2015-16. The basic year was 2007-08, but he said there was no legal requirement to review the formula every ten years.

The standard and formula for measuring inflation is determined by the prevailing methodology globally as the inflation figures set by the Statistics Agency are also used by other institutions including the International Monetary Fund (IMF) and the World Bank in regional comparative studies. Therefore, the formula is worked out by working from all aspects, and the statistics that are determined on the basis of the formula that is determined, gains global trust.

وفاقی حکومت نے ملک میں مہنگائی کی شرح کے تعین کے فارمولے میں تبدیلی کا اصولی فیصلہ کیا ہے جس کے لیے ادارہ شماریات نے ابتدائی کام شروع کر دیا ہے۔

مہنگائی کی شرح کے تعین کے لیے نیا فارمولہ کنزیومر پرائس انڈیکس (سی پی آئی) اور حساس قیمت انڈیکس (ایس پی آئی) کے لیے مہنگائی کی شرح کی پیمائش کے لیے ڈیزائن کردہ ٹوکری میں شامل اشیاء کے تناسب اور وزن کو تبدیل کر دے گا۔ ٹوکری میں شامل اشیاء کی قیمت کے تناسب اور آبادی کے تناسب کے ساتھ ساتھ اشیاء کے وزن کا بھی جائزہ لیا جائے گا۔

ذرائع کا کہنا ہے کہ نئے فارمولے میں دیہی اور شہری علاقوں کی آبادی اور جی ڈی پی میں ان کے حصے اور مہنگائی میں ان علاقوں کی ٹوکری کا بھی جائزہ لیا جائے گا جو آبادی کے تناسب سے نہیں ہیں اور مہنگائی کے تناسب کے تعین میں۔ معمولی اور غیر حقیقی فرق پایا جائے گا۔ اس فرق کو دور کیا جائے۔

ذرائع کے مطابق مہنگائی کی ٹوکری میں شامل کراچی کی آبادی ملک کی آبادی کا تقریباً 10 فیصد ہے جب کہ مہنگائی کی پیمائش کے لیے کراچی 40 فیصد ہے۔

اس حوالے سے ادارہ شماریات کے اعلیٰ عہدیدار کا کہنا تھا کہ مہنگائی کی شرح کے تعین کے فارمولے کا ہر دس سال بعد جائزہ لینا ہوگا اور نیا فارمولہ متعارف کرانا ہوگا۔ اس وقت افراط زر کی شرح کے تعین کا بنیادی سال 2015-16 ہے۔ بنیادی سال 2007-08 تھا، لیکن انہوں نے کہا کہ ہر دس سال بعد فارمولے کا جائزہ لینے کی کوئی قانونی ضرورت نہیں تھی۔

مہنگائی کو ماپنے کا معیار اور فارمولہ عالمی سطح پر مروجہ طریقہ کار سے متعین ہوتا ہے کیونکہ ادارہ شماریات کی طرف سے متعین کردہ افراط زر کے اعداد و شمار کو بین الاقوامی مالیاتی فنڈ اور عالمی بینک سمیت دیگر ادارے بھی علاقائی تقابلی مطالعات میں استعمال کرتے ہیں۔ اس لیے تمام پہلوؤں سے کام کر کے فارمولے پر کام کیا جاتا ہے اور جو فارمولہ طے کیا جاتا ہے اس کی بنیاد پر جو اعدادوشمار طے کیے جاتے ہیں، وہ عالمی اعتماد حاصل کرتا ہے۔