Home Tech Zuckerberg on Facebook assured to review the Content guidelines after Criticism

Zuckerberg on Facebook assured to review the Content guidelines after Criticism

فیس بک پر زکربرگ نے تنقید کے بعد مواد کے رہنما خطوط پر نظرثانی کی یقین دہانی کرائی

جمعہ کے روز ، فیس بک کے سی ای او مارک زکربرگ نے کہا کہ وہ پالیسی میں ان تبدیلیوں پر غور کریں گے جس کی وجہ سے کمپنی حالیہ مظاہروں کے دوران صدر ڈونلڈ ٹرمپ کا متنازعہ عہدہ ترک کرنے پر مجبور ہوگئی تھی جب پولیس کی تحویل میں رہتے ہوئے ایک سیاہ فام شخص کی ہلاکت کے خلاف احتجاج کیا گیا تھا ، یہ ناقدین کے لئے جزوی مراعات تھے۔

زکربرگ فیس بک پوسٹ میں پالیسی میں مخصوص تبدیلیوں کا وعدہ نہیں کرے گا ، عملے کے ممبروں کی نوکری چھوڑنے کے چند دن بعد ، کچھ لوگوں کا دعویٰ ہے کہ انہیں ٹرمپ کو چیلنج نہ کرنے کے لئے ابھی بھی نئے جواز ڈھونڈ رہے ہیں۔

میں آپ میں سے بہت ساروں کو یہ بتاتا ہوں کہ ہم نے گذشتہ ہفتے صدر کی پوسٹوں کو نشان زد کیا تھا ، “زکربرگ نے لکھا ،” جب لوٹ مار شروع ہوجاتی ہے تو ، فائرنگ کا آغاز ہوتا ہے۔ “

ہمیں اپنی قانون سازی کو قابل بنانے کے لئے بات چیت اور ریاست کے ذریعہ طاقت کے استعمال کا مطالعہ کرنا چاہئے یہ دیکھنے کے لیے کہ کیا کوئی تبدیلی ہے جس کو ہم نافذ کرسکتے ہیں۔ “ثنائی رخصت چھوڑیں یا نیچے لے جانے والے فیصلوں کے علاوہ ، ہم خلاف ورزی کرنے یا جزوی طور پر خلاف ورزی کرنے والے مواد سے نمٹنے کے لئے ممکنہ اختیارات کا جائزہ لیں گے”۔

زکربرگ ”کا کہنا ہے کہ فیس بک اس فیصلے کے بارے میں زیادہ شفاف ہوگا کہ آیا پوسٹوں کو نیچے لانا ، پوسٹوں کی پالیسیوں پر نظرثانی کرنا ہے جو ووٹروں کو دبانے کا باعث بن سکتی ہیں ، اور اہم لیفٹینینٹس کی سربراہی میں نسلی انصاف کو آگے بڑھانے کے لئے سافٹ ویئر کی تلاش کرے گی۔

فیس بک میں اکثریت کی دلچسپی رکھنے والے زکربرگ نے واضح کیا ہے کہ جب وہ ٹرمپ کے تبصرے کو “شدید غمناک” سمجھتے ہیں ، تو انہوں نے تشدد پر اکسانے کے خلاف کمپنی کی پالیسی کی خلاف ورزی نہیں کی۔

فیس بک کی پالیسی یہ ہے کہ یا تو اس پوسٹ کو نیچے لے جائیں یا کسی دوسرے آپشن کے بغیر ، اسے چھوڑ دیں۔ اب ، زکربرگ نے کہا کہ وہ دوسرے امکانات پر بھی غور کریں گے۔

لیکن انہوں نے مزید کہا ، “مجھے اندیشہ ہے کہ اس نقطہ نظر سے ہم ایسے مواد کی ادارتی نگاری کا باعث بن سکتے ہیں جو ہم پسند نہیں کرتے ہیں یہاں تک کہ اگر یہ ہماری پالیسیوں کی خلاف ورزی نہیں کرتا ہے”۔

On Friday, Facebook CEO Mark Zuckerberg said he would consider changes to the policy that forced the company to step down from the controversial post of President Donald Trump during recent protests when he was in police custody. Protests against the death of a black man while living were partial concessions to critics.

Zuckerberg will not promise specific policy changes in a Facebook post, just days after staff members quit their jobs, with some claiming they are still looking for new excuses not to challenge Trump.

I assume many of you think that we’d have branded the President’s posts somehow last week,” Zuckerberg wrote, referring to his decision not to delete Trump’s message containing the expression “when the looting starts, the shooting starts.”

We must study negotiations and the use of force by the state to enable our legislation to see if there is any change we can implement. “In addition to binary leave or downhill decisions, we will review possible options for dealing with infringing or partially infringing content.”

Zuckerberg says Facebook will be more transparent about its decision on whether to downplay posts, review post policies that could oppress voters, and promote racial justice, led by key lieutenants. Will look for software to enhance.

Zuckerberg, who has a majority interest in Facebook, has made it clear that while he considers Trump’s comments “extremely sad,” he has not violated the company’s policy against inciting violence.

Facebook’s policy is to either take this post down or leave it without any other option. Now, Zuckerberg said, he will consider other possibilities.

But he added: “I’m concerned that this approach could lead to editorial content that we do not like, even if it does not violate our policies.”

LEAVE A REPLY

Please enter your comment!
Please enter your name here

Most Popular

Live with Dr. Shahid Masood 3rd March 2021

Live with Dr. Shahid Masood live telecasted today at GNN News can be watched here online with ease. Today's Live with Dr....

Muqabil Public Kay Sath 3rd March 2021

Muqabil Public Kay Sath live telecasted today at Public Tv News can be watched here online with ease. Today's Muqabil Public Kay...

Ho Kya Raha Hai 3rd March 2021

Ho Kya Raha Hai live telecasted today at 92 News HD Plus can be watched here online with ease. Today's Ho Kya...

On The Front 3rd March 2021

On The Front live telecasted today at Dunya News can be watched here online with ease. Today's On The Front show topic...

Recent Comments