Saturday, September 19, 2020
Home Tech US Govt shut down TikTok & WeChat

US Govt shut down TikTok & WeChat

امریکی حکومت نے ٹک ٹاک اور وی چیٹ کو بند کردیا

اس ہفتے کے شروع میں ، امریکی صدر ڈونلڈ ٹرمپ نے دھمکی دی تھی کہ جب تک امریکی سافٹ ویئر بنانے والی کمپنی مائیکرو سافٹ کے ذریعہ چینی درخواست حاصل نہیں کی جاتی اس وقت تک ٹِک ٹوک پر پابندی عائد کردی جائے گی۔ اس کے فورا بعد ہی ، چین میں ایک سرکاری حمایت یافتہ کاغذ نے چینی ٹیکنالوجی خریدنے کی اس کوشش کو ’دھونس‘ کے نام سے موسوم کیا۔

تاہم ، چینی حکومت اور ٹِک ٹِک پیرنٹ کمپنی بائٹ ڈانس پر مزید دباؤ ڈالنے کے لئے ، صدر ٹرمپ نے ایک ایگزیکٹو آرڈر پر دستخط کیے ہیں جس میں چینی ایپس کے وسیع استعمال کو ’قومی ہنگامی صورتحال‘ قرار دیا گیا ہے۔

اس آرڈر میں بائٹ ڈینس یا اس کے ذیلی اداروں کے ساتھ 45 دنوں میں “کسی بھی شخص کے لین دین” کی ممانعت ہوگی۔ اس کا مطلب یہ ہے کہ ایپل اور گوگل اب اپنے متعلقہ ایپ اسٹورز پر اطلاق کی عدالت نہیں کرسکیں گے۔ یہ حکم سینیٹ نے متفقہ طور پر تمام سرکاری ڈیوائسز سے ٹک ٹوک پر پابندی عائد کرنے کے ووٹ دینے کے چند گھنٹوں بعد جاری کیا۔

آرڈر میں لکھا گیا ہے:

عوامی جمہوریہ چین میں کمپنیوں کے ذریعہ تیار کردہ اور ان کی ملکیت میں موبائل ایپلی کیشنز کا ریاستہائے متحدہ میں پھیلاؤ ، ریاستہائے متحدہ کی قومی سلامتی ، خارجہ پالیسی ، اور معیشت کے لئے خطرہ ہے۔ اس وقت ، خاص طور پر ، ٹِک ٹِک کے ایک موبائل ایپلیکیشن کے ذریعہ لاحق خطرے سے نمٹنے کے لئے کارروائی کرنا ہوگی۔

نوٹ کریں کہ حکم ٹک ٹک پر پابندی لگانے کے بارے میں براہ راست بات نہیں کرتا ہے ، بلکہ بائٹ ڈانس کے ساتھ لین دین پر پابندی عائد کرتا ہے۔ لہذا ، اگر مائیکروسافٹ ایپلی کیشن کو حاصل کرنے میں کامیاب ہوتا ہے تو ، ٹِک ٹاک کام کرتا رہے گا۔

امریکی حکومت بنیادی طور پر چینی ایپس کے صارف کے اعداد و شمار کو ہینڈل کرنے کے طریقہ سے ہی فکر مند ہے۔

آرڈر کی تفصیلات

ٹک ٹوک اپنے صارفین سے خود بخود وسیع پیمانے پر معلومات حاصل کرتا ہے ، بشمول انٹرنیٹ اور نیٹ ورک کی سرگرمی سے متعلق معلومات جیسے مقام کا ڈیٹا اور براؤزنگ اور سرچ ہسٹری۔ اس ڈیٹا اکٹھا کرنے سے چینی کمیونسٹ پارٹی کو امریکیوں کی ذاتی اور ملکیتی معلومات تک رسائی کی اجازت دینے کی دھمکی دی گئی ہے۔ یہ ممکنہ طور پر چین کو وفاقی ملازمین اور ٹھیکیداروں کے مقامات کا سراغ لگانے ، بلیک میل کے لئے ذاتی معلومات کے ڈاسیر بنانے اور کارپوریٹ جاسوسی کرنے کی اجازت دیتا ہے۔

یہ گذشتہ روز دستخط کیے گئے دو ایگزیکٹو آرڈرز میں سے ایک تھا۔ دوسرا ایک اطلاق چینی دیو ٹینسنٹ کی ملکیت والی چینی آئی ایم درخواست وی چیٹ کے خلاف ہے۔ یہ پابندی 45 دن میں بھی نافذ ہوگی۔ تاہم ، اگر اس پابندی کو ٹین سینٹ تک بڑھا دیا گیا ہے ، تو اس سے گیمنگ انڈسٹری اور ایپورٹس پر بڑے پیمانے پر اثرات مرتب ہوں گے۔ یہ ساری صورتحال یاد دلاتی ہے کہ ہواوے پر پابندی کا آغاز کیسے ہوا۔

Earlier this week, US President Donald Trump threatened to ban TikTok unless the Chinese application is purchased by US software maker Microsoft. Soon after, this attempt to buy Chinese technology was labeled “bullying” by a government-sponsored newspaper in China.

However, in order to put more pressure on the Chinese government and the TikTok parent company ByteDance, President Trump has signed an ordinance calling the widespread use of Chinese apps a “national emergency”.

The order prohibits “any one person’s transaction” with ByteDance or its subsidiaries within 45 days. This means that Apple and Google can no longer advertise the app in their respective app stores. The order came a few hours after the Senate unanimously voted to ban TikTok from all government devices.

The order is:

The proliferation of mobile applications in the United States developed and owned by companies in the People’s Republic of China continues to threaten US national security, foreign policy, and the economy. At this point, action must be taken to address the threat from a mobile application, especially TikTok.

Note that the order does not speak directly about the prohibition of TikTok, but rather transactions with ByteDance are blocked. Therefore, if Microsoft manages to acquire the application, TikTok will continue to operate.

The US government is mainly concerned about how Chinese apps handle user data.

The order details:

TikTok automatically collects large amounts of information from its users, including internet and other network activity information such as location data, as well as browsing and search history. This data collection threatens to give the Chinese Communist Party access to Americans’ personal and proprietary information. China may be able to track the locations of federal employees and contractors, prepare dossiers of personal information for extortion, and engage in corporate espionage.

This was one of the two executive orders signed yesterday. The other is against the Chinese giant Tencent’s WeChat IM application. This ban will also come into force in 45 days. However, if the ban is extended to TenCent, it will have a massive impact on the gaming industry and esports. The whole situation reminds us of how the Huawei ban began.

LEAVE A REPLY

Please enter your comment!
Please enter your name here

Most Popular

Ab Pata Chala 18th September 2020

Ab Pata Chala live telecasted today at Bol News can be watched here online with ease. Today's Ab Pata Chala show topic...

92 At 8 18th September 2020

92 At 8 live telecasted today at 92 News HD Plus can be watched here online with ease. Today's 92 At 8...

Rubaroo 18th September 2020

Rubaroo live telecasted today at Aaj News can be watched here online with ease. Today's Rubaroo show topic is Nawaz Sharif's Warrants,...

Breaking Point with Malick 18th September 2020

Breaking Point with Malick live telecasted today at HUM News can be watched here online with ease. Today's Breaking Point with Malick...

Recent Comments