Wednesday, September 23, 2020
Home Tech Trump administration has imposed new sanctions on Huawei

Trump administration has imposed new sanctions on Huawei

ٹرمپ انتظامیہ نے ہواوے پر نئی پابندیاں عائد کردی ہیں

امریکہ چین کے ہواوے پر پابندیوں کا ایک اور دور نافذ کررہا ہے کیونکہ صدر ڈونلڈ ٹرمپ نے الزامات کی تجدید کرتے ہوئے کہا ہے کہ کمپنی کے ٹیلی مواصلات کا سامان جاسوسی کے لئے استعمال ہوتا ہے۔

ٹرمپ نے پیر کو فاکس کو بتایا ، “ہم ان کا سامان امریکہ میں نہیں چاہتے کیونکہ وہ ہم پر جاسوسی کرتے ہیں۔” “اور کوئی بھی ملک جو اسے استعمال کرتا ہے ، ہم انٹیلی جنس کے اشتراک کے معاملے میں کچھ نہیں کرنے جارہے ہیں۔”

کامرس ڈیپارٹمنٹ کے نئے قواعد ، جو پیر کو نافذ کیے گئے ہیں ، ہواوے کو چپ ٹیکنالوجی تک رسائی سے روک دے گا۔ ہواوے کے ایک ایگزیکٹو نے رواں ماہ کہا تھا کہ کمپنی امریکی پابندیوں کی وجہ سے سمارٹ فون بنانے کے لئے پروسیسر چپس ختم کررہی ہے اور شاید اسے اپنی اعلی درجے کی چپس کی تیاری کو روکنے پر مجبور کیا جاسکتا ہے۔

ہواوے ٹکنالوجی اور سیکیورٹی کے سلسلے میں بڑھتے ہوئے امریکی چینی تناؤ کا مرکز رہا ہے۔ اس اسٹینڈ آؤف نے اب مقبول چینی ملکیت والی ویڈیو ایپ ٹِک ٹوک اور چین پر مبنی میسجنگ سروس وی چیٹ کو ڈھیر بنا دیا ہے ، یہ دونوں ہی ستمبر میں شروع ہونے والے امریکہ میں پابندی کے خطرہ ہیں۔

ہواوے بار بار ان الزامات کی تردید کرتا رہا ہے جس سے چینی جاسوسوں کی سہولت ہوسکتی ہے۔ چینی عہدے داروں نے واشنگٹن پر الزام عائد کیا ہے کہ وہ امریکی سیکیورٹی کی صنعتوں کے حریف کو روکنے کے بہانے کے طور پر قومی سلامتی کو استعمال کررہا ہے۔

امریکی کامرس کے سکریٹری ولبر راس نے پیر کو فاکس بزنس کو بتایا کہ نئی کارروائی نفاذ پر مبنی ہے اور یہ امریکہ اور چین کے مابین “تجارت سے متعلق براہ راست تعلق نہیں” ہے۔

واشنگٹن نے گذشتہ سال گوگل کے میوزک اور دیگر اسمارٹ فون خدمات سمیت امریکی اجزاء اور ٹیکنالوجی تک ہواوے کی رسائی منقطع کردی تھی۔ ان سزاؤں کو مئی میں سخت کردیا گیا تھا جب وائٹ ہاؤس نے دنیا بھر کے دکانداروں کو ہواوے کے لئے اجزاء تیار کرنے کے لئے امریکی ٹیکنالوجی کے استعمال سے روک دیا تھا۔

محکمہ تجارت کے پیر نے کہا کہ اس پر پابندیاں سخت کی جارہی ہیں کیونکہ ہواوے نے ان سے “مستعار ہونے کی کوشش کی ہے”۔ نیا قاعدہ ایسا ہوا ہے کہ امریکہ سے حاصل کردہ ٹولز کے ذریعہ بنی تجارتی طور پر دستیاب چپس تک ہواوے کی رسائی کو روکنے کے لئے بنایا گیا ہے۔

امریکہ نے بھی حویوی سے وابستہ 38 کمپنیوں کو کچھ حساس ٹکنالوجیوں کے حصول پر پابندی عائد کمپنیوں کی موجودہ فہرست میں شامل کیا۔ اور اس سے ایک چھوٹ ختم ہوگئی جس کی وجہ سے امریکہ میں ہواوے کے کچھ صارفین کو اپنے آلات اور سافٹ وئیر کا استعمال جاری رکھنے کی اجازت مل گئی۔

The United States is imposing another round of sanctions on China’s Huawei as President Donald Trump renews allegations that the company’s telecommunications equipment is used for espionage.

“We don’t want their stuff in the United States because they’re spying on us,” Trump told Fox on Monday. “And any country that uses it, we’re not going to do anything about intelligence sharing.”

The Commerce Department’s new rules, which went into effect Monday, will prevent Huawei from accessing chip technology. A Huawei executive said earlier this month that the company was scrapping processor chips to make smartphones due to US sanctions and may be forced to suspend production of its advanced chips.

Huawei has been at the center of growing US-Chinese tensions over technology and security. The standoff now piles up the popular Chinese-owned video app TickTock and the China-based messaging service and chat, both of which are in danger of being banned in the United States starting in September.

Huawei has repeatedly denied allegations that it could facilitate Chinese spies. Chinese officials have accused Washington of using national security as an excuse to deter rivals in the US security industry.

US Commerce Secretary Wilbur Ross told Fox Business on Monday that the new action was based on implementation and was “not a direct trade relationship” between the United States and China.

Washington last year cut off Huawei’s access to US components and technology, including Google’s music and other smartphone services. The sanctions were tightened in May when the White House barred vendors around the world from using US technology to manufacture components for Huawei.

The Commerce Department said Monday that sanctions were being tightened because Huawei had “tried to borrow” from them. The new rule is designed to block Huawei’s access to commercially available chips made with tools obtained from the United States.

The United States also added 38 Huawei-affiliated companies to its current list of companies banned from acquiring certain sensitive technologies. And that ended a waiver that allowed some Huawei users in the United States to continue using their devices and software.

LEAVE A REPLY

Please enter your comment!
Please enter your name here

Most Popular

On The Front 22nd September 2020

On The Front live telecasted today at Dunya News can be watched here online with ease. Today's On The Front show topic...

Khabar Hai 22nd September 2020

Khabar Hai live telecasted today at GNN News can be watched here online with ease. Today's Khabar Hai show topic is Baldia...

Live with Dr. Shahid Masood 22nd September 2020

Live with Dr. Shahid Masood live telecasted today at GNN News can be watched here online with ease. Today's Live with Dr....

Benaqaab 22nd September 2020

Benaqaab live telecasted today at Abb Tak News can be watched here online with ease. Today's Benaqaab show topic is Badlia Town...

Recent Comments