Home World Russia destroys its own satellite in missile test

Russia destroys its own satellite in missile test

روس نے میزائل تجربے میں اپنا ہی سیٹلائٹ تباہ کر دیا

The United States has condemned Russia for launching a “dangerous and irresponsible” missile attack that destroyed its own satellites and created a cloud of debris that forced the crew of the International Space Station to take rescue measures.

Officials said Washington had not been notified of the test and would talk to allies to respond, according to news reports.

It should be noted that this was the fourth experiment to hit a spacecraft from the ground.

The move has rekindled concerns about the arms race in space, which includes everything from laser weapons to satellites capable of taking others out of orbit.

US Secretary of State Anthony Blankenship said in a statement that “on November 15, 2021, the Russian Federation recklessly conducted a devastating test of a direct anti-satellite missile against one of its own satellites.”

He said the experiment produced more than 1,500 tracking debris in orbit, which could produce millions of small debris.

The statement said four Americans, a German and two Russians at the space station had to take refuge in their return planes, a standard “safe haven” alarm system that could force evacuation in the event of an emergency.

The Russian space agency Roscosmus said in a tweet that the station later returned to “green” alert levels.

However, Anthony Blanken said in strong words that the danger is not over yet.

The US Secretary of State said: “The long-term debris created by this dangerous and irresponsible test will now endanger satellites and other space objects that are essential for all nations and will continue to plague all nations for decades to come.” Important for security, economic and scientific interests.

The missile was aimed at the Cosmos 1408, a 1982 Soviet signals intelligence satellite and has been out of order for decades, according to space industry analyst company Seradata.

Anti-satellite weapons are state-of-the-art missiles that only a few countries have.

India was the last country to test a target in 2019, producing hundreds of pieces of “space debris” which was strongly criticized by other powers, including the United States.

امریکہ نے روس کی جانب سے “خطرناک اور غیر ذمہ دارانہ” میزائل حملے کی مذمت کی ہے جس نے اپنے ہی سیٹلائٹس کو تباہ کر دیا اور ملبے کا ایک ایسا بادل پیدا کر دیا جس نے بین الاقوامی خلائی سٹیشن کے عملے کو بچاؤ کے اقدامات کرنے پر مجبور کر دیا۔

خبروں کے مطابق، حکام نے کہا کہ واشنگٹن کو ٹیسٹ کے بارے میں مطلع نہیں کیا گیا تھا اور وہ جواب دینے کے لیے اتحادیوں سے بات کریں گے۔

واضح رہے کہ کسی خلائی جہاز کو زمین سے ٹکرانے کا یہ چوتھا تجربہ تھا۔

اس اقدام نے خلا میں ہتھیاروں کی دوڑ کے بارے میں خدشات کو پھر سے جنم دیا ہے، جس میں لیزر ہتھیاروں سے لے کر سیٹلائٹ تک سب کچھ شامل ہے جو دوسروں کو مدار سے باہر لے جانے کی صلاحیت رکھتے ہیں۔

امریکی وزیر خارجہ انتھونی بلینکن شپ نے ایک بیان میں کہا کہ “15 نومبر 2021 کو روسی فیڈریشن نے لاپرواہی سے اپنے ہی ایک سیٹلائٹ کے خلاف براہ راست اینٹی سیٹلائٹ میزائل کا تباہ کن تجربہ کیا۔”

انہوں نے کہا کہ اس تجربے نے مدار میں 1500 سے زیادہ ٹریکنگ ملبہ پیدا کیا، جس سے لاکھوں چھوٹے ملبے پیدا ہو سکتے ہیں۔

بیان میں کہا گیا ہے کہ خلائی اسٹیشن پر چار امریکی، ایک جرمن اور دو روسیوں کو اپنے واپسی والے طیاروں میں پناہ لینی پڑی، یہ ایک معیاری “محفوظ پناہ گاہ” الارم سسٹم ہے جو ہنگامی صورت حال میں انخلاء پر مجبور کر سکتا ہے۔

روسی خلائی ایجنسی نے ایک ٹویٹ میں کہا کہ اسٹیشن بعد میں “سبز” الرٹ کی سطح پر واپس آگیا۔

تاہم انتھونی بلینکن نے سخت الفاظ میں کہا کہ خطرہ ابھی ختم نہیں ہوا۔

امریکی وزیر خارجہ نے کہا: “اس خطرناک اور غیر ذمہ دارانہ ٹیسٹ سے پیدا ہونے والا طویل المدتی ملبہ اب مصنوعی سیاروں اور دیگر خلائی اشیاء کو خطرے میں ڈال دے گا جو تمام قوموں کے لیے ضروری ہیں اور آنے والی دہائیوں تک تمام قوموں کو وبائی شکل دیتے رہیں گے۔” سلامتی، اقتصادی اور سائنسی مفادات کے لیے اہم۔

خلائی صنعت کی تجزیہ کار کمپنی سیراڈاٹا کے مطابق، میزائل کا مقصد کاسموس 1408 تھا، جو 1982 کا سوویت سگنلز کا انٹیلی جنس سیٹلائٹ تھا اور کئی دہائیوں سے غیر منظم ہے۔

اینٹی سیٹلائٹ ہتھیار جدید ترین میزائل ہیں جو صرف چند ممالک کے پاس ہیں۔

بھارت 2019 میں ہدف کا تجربہ کرنے والا آخری ملک تھا، جس نے “خلائی ملبے” کے سینکڑوں ٹکڑے تیار کیے جس پر امریکہ سمیت دیگر طاقتوں نے سخت تنقید کی۔

LEAVE A REPLY

Please enter your comment!
Please enter your name here

Most Popular

Alia Bhatt made her fan cry

عالیہ بھٹ نے اپنے مداح کو رلا دیا Bollywood star Alia Bhatt recognized her fan even after 7...

Most watched match of Pak-India World Cup T20

پاک بھارت ورلڈ کپ ٹی20 کا سب سے زیادہ دیکھا جانے والا میچ The International Cricket Council (ICC)...

Taliban-U.S talks will resume in in Doha, Qatar

قطر کے دارالحکومت دوحہ میں طالبان امریکہ مذاکرات دوبارہ شروع ہوں گے Zabihullah Mujahid, a spokesman for the...

Dollar reached a record high of Rs 179

ڈالر 179 روپے کی بلند ترین سطح پر پہنچ گیا The dollar continued to soar, reaching a high...

Recent Comments