Home Entertainment Make my life easier by deciding the case, Ali Zafar's appeal to...

Make my life easier by deciding the case, Ali Zafar’s appeal to the court

کیس کا فیصلہ کر کے میری زندگی کو آسان بنائیں ، علی ظفر کی عدالت میں اپیل

Actor and singer Ali Zafar has appealed to the local court in Lahore to ease the life by hearing verdict of case by Mesha Shafi, Ali Gul Pir and Effat Umar against a hate campaign on social media.

According to Dawn newspaper, Ali Zafar filed a case in November 2018 against Mesha Shafi, Ali Gul Pir, Effat Umar and Hamna Raza for running a false campaign on social media.

Magistrate Yousuf Abdul Rehman heard the case, during which Ali Zafar appeared and he also filed a petition in the court declaring the medical certificate presented by Ali Gul Pir in the said case to be false.

The court took notice of Ali Zafar’s application and issued notices regarding Ali Gul Pir’s medical certificate.

The court also granted Fareeha Ayub’s request for exemption from personal appearance.

The magistrate also granted the petition seeking revocation of his arrest warrant filed by Ali Gul Pir in the same case.

Read also: Campaign case on social media: Ali Zafar’s request for action against Ali Gul Pir

The court made the arrest warrant of Ali Gul Pir conditional on his continuous appearance in court.

The court rejected the pleas of Mesha Shafi and Mahim Javed for immunity and ordered them to appear on November 8 next month.

The court remarked that Mesha Shafi and Mahim Javed have not appeared in court again since the commencement of the hearings, so their plea cannot be heard in their absence.

During the hearing, Ali Zafar told the court that he was going to Islamabad when his lawyer told him that a hearing was to be held today and he appeared in court within an hour while the other party had not appeared in court for three years.

Ali Zafar stated in the court that Mesha Shafi has not appeared yet and there is a strong possibility that she will not appear in the future, so her life should be made easier by announcing the verdict in the said case.

The singer and actor requested the court to resolve the issue by hearing the decision of the petition filed by him against other accused including Mesha Shafi, Ali Gul Pir and Effat Omar.

It is believed that the case is a case of systematic hate campaign on social media against Ali Zafar, which was first registered by Ali Zafar in November 2018 with the Federal Investigation Agency (FIA).

Read more: Campaign case against Ali Zafar: Ali Gul refuses to apologize on Monday 3 year old tweet

Ali Zafar had lodged a complaint with the FIA ​​Cyber ​​Crime Wing in November 2018, alleging that several social media accounts were posting “insulting and threatening material” against him.

Ali Zafar had alleged that in April 2018, weeks before Mesha Shafi’s allegations of sexual harassment, several fake accounts had launched a vicious campaign against the singer.

Later, the FIA, after investigating his request for two years, convicted nine persons, including Mesha Shafi, Ali Gul Pir, Effat Umar and Mahim Javed, of running a campaign against Ali Zafar and sent their case to court. Had given

Following the FIA ​​investigation, the case is now pending in the court and its hearings are about a year away but it has not been decided yet.

On one occasion in the same case, the court had also issued an arrest warrant for Ali Gul Pir, but later he was granted pre-arrest bail and now his warrant has been canceled and he has been ordered to appear before the next hearing.

اداکار اور گلوکار علی ظفر نے لاہور کی مقامی عدالت سے اپیل کی ہے کہ وہ سوشل میڈیا پر نفرت انگیز مہم کے خلاف میشا شفیع ، علی گل پیر اور عفت عمر کی جانب سے کیس کا فیصلہ سن کر زندگی کو آسان بنائے۔

ڈان اخبار کے مطابق علی ظفر نے سوشل میڈیا پر جھوٹی مہم چلانے پر میشا شفیع ، علی گل پیر ، عفت عمر اور حمنا رضا کے خلاف نومبر 2018 میں مقدمہ دائر کیا۔

مجسٹریٹ یوسف عبدالرحمان نے کیس کی سماعت کی ، اس دوران علی ظفر پیش ہوئے اور انہوں نے مذکورہ کیس میں علی گل پیر کے پیش کردہ میڈیکل سرٹیفکیٹ کو جھوٹا قرار دیتے ہوئے عدالت میں درخواست بھی دائر کی۔

عدالت نے علی ظفر کی درخواست کا نوٹس لیا اور علی گل پیر کے میڈیکل سرٹیفکیٹ کے حوالے سے نوٹس جاری کیے۔

عدالت نے فریحہ ایوب کی ذاتی حاضری سے استثنیٰ کی درخواست بھی منظور کرلی۔

مجسٹریٹ نے اسی کیس میں علی گل پیر کی جانب سے دائر کیے گئے ان کے وارنٹ گرفتاری کی منسوخی کی درخواست بھی منظور کرلی۔

عدالت نے علی گل پیر کے وارنٹ گرفتاری کو عدالت میں مسلسل پیش ہونے پر مشروط کردیا۔

عدالت نے میشا شفیع اور ماہم جاوید کی استثنیٰ کی درخواست مسترد کرتے ہوئے انہیں آئندہ ماہ 8 نومبر کو پیش ہونے کا حکم دیا۔

عدالت نے ریمارکس دیئے کہ میشا شفیع اور ماہم جاوید سماعت کے آغاز کے بعد سے دوبارہ عدالت میں پیش نہیں ہوئے ، اس لیے ان کی عدم موجودگی میں ان کی درخواست پر سماعت نہیں کی جا سکتی۔

سماعت کے دوران علی ظفر نے عدالت کو بتایا کہ وہ اسلام آباد جا رہے تھے جب ان کے وکیل نے انہیں بتایا کہ آج سماعت ہونی ہے اور وہ ایک گھنٹے کے اندر عدالت میں پیش ہوئے جبکہ دوسرا فریق تین سال سے عدالت میں پیش نہیں ہوا۔

علی ظفر نے عدالت میں بیان دیا کہ میشا شفیع ابھی پیش نہیں ہوئی ہے اور اس بات کا قوی امکان ہے کہ وہ مستقبل میں پیش نہیں ہوں گی ، لہٰذا مذکورہ کیس میں فیصلہ سناتے ہوئے اس کی زندگی کو آسان بنایا جائے۔

گلوکار اور اداکار نے عدالت سے درخواست کی کہ وہ میشا شفیع ، علی گل پیر اور عفت عمر سمیت دیگر ملزمان کے خلاف دائر درخواست کا فیصلہ سن کر اس مسئلے کو حل کرے۔

خیال کیا جاتا ہے کہ یہ کیس علی ظفر کے خلاف سوشل میڈیا پر منظم نفرت انگیز مہم کا معاملہ ہے ، جسے علی ظفر نے پہلی بار نومبر 2018 میں وفاقی تحقیقاتی ایجنسی (ایف آئی اے) کے ساتھ رجسٹر کیا تھا۔

علی ظفر نے نومبر 2018 میں ایف آئی اے سائبر کرائم ونگ میں شکایت درج کی تھی ، جس میں الزام لگایا گیا تھا کہ کئی سوشل میڈیا اکاؤنٹس ان کے خلاف “توہین آمیز اور دھمکی آمیز مواد” شائع کر رہے ہیں۔

علی ظفر نے الزام لگایا تھا کہ اپریل 2018 میں میشا شفیع کے جنسی ہراسانی کے الزامات سے چند ہفتے قبل کئی جعلی اکاؤنٹس نے گلوکار کے خلاف ایک شیطانی مہم شروع کی تھی۔

بعد ازاں ایف آئی اے نے دو سال تک اس کی درخواست کی تفتیش کے بعد میشا شفیع ، علی گل پیر ، عفت عمر اور ماہم جاوید سمیت نو افراد کو علی ظفر کے خلاف مہم چلانے کا مجرم ٹھہرایا اور ان کا کیس عدالت میں بھیج دیا۔ دیا گیا تھا

ایف آئی اے کی تفتیش کے بعد یہ کیس اب عدالت میں زیر التوا ہے اور اس کی سماعتوں کو تقریبا ایک سال کا عرصہ باقی ہے لیکن ابھی تک اس کا فیصلہ نہیں ہوا۔

اسی معاملے میں ایک موقع پر عدالت نے علی گل پیر کے وارنٹ گرفتاری بھی جاری کیے تھے تاہم بعد ازاں انہیں قبل از گرفتاری ضمانت دے دی گئی اور اب ان کے وارنٹ منسوخ کر دیے گئے ہیں اور انہیں آئندہ سماعت پر پیش ہونے کا حکم دیا گیا ہے۔

LEAVE A REPLY

Please enter your comment!
Please enter your name here

Most Popular

FATF decides to keep Pakistan on gray list

ایف اے ٹی ایف کا پاکستان کو گرے لسٹ میں رکھنے کا فیصلہ The Financial Action Task Force...

Sri Lanka Reached Super 12 defeating Ireland in T20 World Cup

سری لنکا نے ٹی 20 ورلڈ کپ میں آئرلینڈ کو شکست دے کر سپر 12 تک رسائی حاصل کرلی

Senate committee summoned the Finance Adviser and the Governor SBP on inflation

سینیٹ کمیٹی نے مہنگائی پر مشیر خزانہ اور گورنر اسٹیٹ بینک کو طلب کر لیا Taking note of...

Rupee hits new low against US dollar

امریکی ڈالر کے مقابلے میں روپیہ تاریخ کی نئی گراوٹ ریکارڈ The Pakistani rupee hit a new record...

Recent Comments