Home Pakistan Highlights of Federal Minister Hamad Azhar's Budget Speech  

Highlights of Federal Minister Hamad Azhar’s Budget Speech  

وفاقی وزیر حماد اظہر کی بجٹ تقریر کے نکات

وفاقی وزیر صنعت و پیداوار حماد اظہر نے قومی اسمبلی میں 2020-2020 کے مالی سال کا وفاقی بجٹ پیش کیا۔

وفاقی وزیر حماد اظہر نے بجٹ تقریر میں پاکستانی فوج کا شکریہ ادا کیا اور کہا کہ پاکستانی فوج حکومت کی سادگی کی پالیسیوں کا شکر گزار ہے۔

بجٹ تقریر کے اہم نکات یہ ہیں۔

بجٹ میں حکومت نے اعلان کیا ہے کہ آبادی کو فارغ کرنے کے لئے کوئی نیا ٹیکس نہیں لگایا جائے گا۔
مہنگائی کو 9.1 فیصد سے گھٹاتے ہوئے 6.5 فیصد کرنے کی تجویز پیش کی گئی ہے۔
70 ارب روپے روپے پانی کے منصوبوں اور 34 ارب ایم ایل ون کے لئےمختص کرنے کی تجویز دی ہے۔ ۔
ایف ای ڈی میں درآمد شدہ سگریٹ ، ہتھکڑی اور سگار کے لئے اضافہ کیا گیا ہے۔
درآمد شدہ سگریٹ پر ڈیوٹی 65 فیصد سے بڑھا کر 100 فیصد کرنے کی تجویز ہے۔
الیکٹرانک سگریٹ پر فیڈرل ایکسائز ٹیکس میں اضافہ کی تجویز۔
کاروں ، موٹرسائیکل رکشہوں اور 200 سی سی موٹرسائیکلوں پر کوئی ایڈوانس ٹیکس نہیں لیا جائے گا –
پاکستان میں موبائل فون بنانے کی اجازت دے دی ۔
پاکستان میں بنے سیل فونز پر سیلز ٹیکس کم کرنے کی تجویز پیش کی گئی ہے۔
کیفینٹڈ مشروبات پر ٹیکس کو 13 فیصد سے بڑھا کر 25 فیصد کرنے کی تجویز پیش کی گئی ہے۔
ایک مشکل سفر سے شروع کرتے ہوئے ، مطلوبہ اہداف کے حصول کے لئے عوام کت ساتھ کی ضرورت ہے
معاشی بحران وراثت میں ملا تھا اور ملک دیوالیہ پن کے دہانے پر تھا۔
پچھلی حکومت میں بجٹ کا خسارہ دو ہزار تین سو ارب روپے کے ریکارڈ اعلی تک پہنچ گیا تھا۔
کرنٹ اکاؤنٹ کا خسارہ 20 ارب روپے تک پہنچ گیا۔
ملک کا قرضہ 31،000 بلین تک جا پہنچا تھا۔
گذشتہ پانچ سالوں میں برآمدات میں اضافہ نہیں ہوا ہے۔
2 سال میں کرپشن کا خاتمہ کیا ۔
سود کی ادائیگیوں کے لئے 2،946 ارب روپے اور ریٹائرڈ ملازموں کو پنشن ادائیگیوں کے لئے 470 ارب روپے دیئے گئے۔
شرح نمو کو بہتر بنانے کے لئے ہر ممکن اقدامات کیے۔ ہمارا مقصد معیشت کو بحال کرنا ہے۔
فیڈرل ڈویلپمنٹ پروگرام کے حجم کو 650 ارب ساڑھے چار ہزار روپے مختص کیا گیا۔ ۔
نان ٹیکس محصول کو 1108 ارب مختص کیا گیا تھا ۔
ایف بی آر کے ریونیومیں 17 فیصد اضافہ ہوا۔
ایف بی آر کے لئے ٹیکس وصولی کا ہدف 4،963 ارب روپے ہے۔
ایف بی آر کو 100 ارب مختص کیے گئے تھے۔
نجکاری کی آمدنی کا تخمینہ 100 ارب روپے لگایا گیا ہے۔
فیڈرل ڈویلپمنٹ پروگرام کے حجم کو 650 ارب روپے مختص کیا گیا ۔
نان ٹیکس محصول 1108 ارب روپے مختص کیا گیا ہے ۔
کرپشن کا خاتمہ اور اداروں کی بحالی کی ترجیح ۔
زرمبادلہ کے بہتر ذخائر
ہم 1600 ارب روپے کا ہدف مکمل پورا کریں گے ۔
5000 ارب سود ادا کیا گیا۔
پچھلی حکومتوں کے قرضوں پر سود کا بوجھ خزانے سے اتارا ۔
تحریک انصاف سماجی انصاف پر یقین رکھتی ہے اور اس کے لئے پرعزم ہے۔
رواں مالی سال کے پہلے پانچ ماہ میں بجٹ خسارہ 5 فیصد سے کم کرکے 3.8 فیصد کردیا گیا۔
پچھلی حکومتوں کے بے پناہ قرض کی وجہ سے 5000 ارب سود ادا ہوا۔
پاکستانی معیشت کی بہتری کے پیش نظر ، آئی ایم ایف نے 6 ارب ڈالر کے توسیعی فنڈز کی منظوری دی۔
بلومبرگ نے دسمبر میں پاکستان کو دنیا کی بہترین معیشتوں میں شامل کیا۔
موڈیز نے بھی ہماری ریٹنگ کو بہتر درجہ دیا۔
ماضی میں منی لانڈرنگ پر قابو پانے کے کوئی اقدامات نہیں کیے گئے ہیں۔
منی لانڈرنگ اور دہشت گردی کی مالی اعانت کے خلاف کارروائی نہ کرنے پر پاکستان کو ایف اے ٹی ایف کی گرے لسٹ میں ڈال دیا گیا ہے۔
جون 2018 میں ، پاکستان کو ایف اے ٹی ایف کی گرے لسٹ میں شامل کیا گیا تھا۔ ہماری حکومت نے قومی ایف اے ٹی ایف کمیٹی تشکیل دے کر اس میں بہتری لائی ہے۔
ہم نے 2 سالوں میں معاشی اشاریوں میں نمایاں بہتری لائی ہے۔
تجارتی خسارے میں 31 فیصد اور بجٹ خسارے میں 3 فیصد کمی واقع ہوئی۔
اس مالی سال میں ، 1،160 ارب کے مقابلے میں ریونیو 1،600 ارب ہوگا ۔
گزشتہ 2 سالوں میں ماضی کے زیادہ قرضوں کی وجہ سے بہت سا سود ادا کیا ۔
9 ماہ میں 17 بلین ڈالر زرمبادلہ کے ذخائر۔
قرضوں میں سے 74 فیصد طویل مدتی قرضوں میں تقسیم کئے گئے ۔
اسٹیٹ بینک سے مزید قرض نہیں لیا جائے گا۔
کرنسی ریٹ مارکیٹ اورینٹل کیا –
تجارت میں حائل رکاوٹیں دور کردی گئیں۔
سرکاری اداروں کی بہتری کے لئے کوششیں کی گئیں ہیں اور شفاف نجکاری کی گئی ہے۔
میڈ اِن پاکستان کے ساتھ ہی پاکستانی مصنوعات بین الاقوامی منڈیوں تک پہنچا دی گئیں۔
حکومت نے شفاف احتساب کو یقینی بنانے کے لئے تمام صوبوں میں ساختی اصلاحات متعارف کروائیں۔
پبلک فنانس مینجمنٹ ایکٹ 2019 کو پہلی بار نافذ کیا گیا۔
پنشن سسٹم میں بہتری لائی گئی ہے۔
ڈاکٹر عشرت حسین کی سربراہی میں ایک ٹیم تشکیل دی گئی ۔
یہ ٹیم 45 کمپنیوں کی نجکاری اور 14 کمپنیوں کو صوبوں میں منتقل کرنے کا ارادہ رکھتی ہے۔
تجارتی خسارہ میں 31 فیصد کمی واقع ہوئی۔
کورونا وائرس کے پھیلائو نے پاکستانی معیشت کو ہلا کر رکھ دیا
طویل لاک ڈائون اور کاروبار کی بندش کے ساتھ ساتھ سفری پابندی سے معیشت کو نقصان پہنچا ہے۔
صنعتوں اور کاروباری اداروں کی بندش سے جی ڈی پی میں 2،100 ارب روپے کی کمی واقع ہوئی۔
کورونا اور مالی اخراجات بجٹ کی ترجیحات میں شامل ہے۔
کرونا کی بحالی کے لئے 1200 ارب روپے سے زائد کے پیکیج کی منظوری دی گئی ہے۔
کورونا وائرس کی صورتِ حال میں خصوصی ترقیاتی بجٹ ضمن میں 70 ارب روپے مختص کیے گئے ہیں۔

کسانوں کو 50 ارب روپے دئے گئے ۔
وفاقی حکومت کے اخراجات مختلف پیکیجوں کے ساتھ بڑھائے گئے۔
معیشت کو بہتر بنانے کے لئے تعمیراتی شعبے کو ریلیف دیا گیا۔
اسٹیٹ بینک نے لاک ڈائون کے منفی اثرات کو دور کرنے کے لئے خصوصی امداد بھی فراہم کی۔
اسٹیٹ بینک نے بینکوں کو انفرادی قرضوں کے لئے 800 ارب روپے فراہم کیے۔
گذشتہ مالی سال میں کوئی اضافی گرانٹ نہیں دی گئی تھی۔
فاٹا اور گلگت بلتستان کے لئے خصوصی بجٹ تیار کرنے کا منصوبہ ہے۔
بچت کے اقدامات اور غیر ضروری اخراجات میں کمی کو یقینی بنایا جائے گا۔
بلین ٹری سونامی اور نیو پاکستان ہاؤسنگ اسکیم بجٹ میں محفوظ ہو گی ۔
نان ٹیکس آمدنی میں اضافے کی توقع ہے۔
احساس پروگرام 187 سے بڑھ کر 208 ارب ہوگیا۔
توانائی اور خوراک سمیت 180 ارب کی رقم مختص کی ہے۔
حکومت ان مشکل اوقات میں کفایت شعاری کے اصولوں پر کاربند ہے۔
دفاع کے لئے 12 کھرب 89 ارب روپے رکھے گئے ہیں۔
وفاقی بجٹ میں مجموعی طور پر 875 ارب روپے رکھے گئے ہیں۔
طبی سامان کی خریداری کے لئے 71 ارب روپے اور غریب خاندانوں کے لئے 150 ارب روپے رکھے گئے ہیں۔
ایمرجنسی فنڈ کے لئے 100 ارب کی فراہمی کی گئی ہے۔
آزاد جموں نے کشمیر کے لئے 55 ارب اور گلگت بلتستان کے لئے 32 ارب روپے فراہم کیے ہیں۔
کے پی کے میں مرج اضلاع کے لئے بھی 56 ارب کی رقم فراہم کی جائے گی۔
سندھ کے لئے 19 ارب اور بلوچستان کے لئے 10 ارب روپے کی خصوصی گرانٹ کی منصوبہ بندی کی جارہی ہے۔
توانائی اور خوراک کے شعبے میں 180 ارب روپے کی گرانٹ فراہم کی گئی۔
آزاد کشمیر اسپیشل ایریا کیلئے 72 ارب مختص کئے گئے ہیں۔
کامیاب نوجوانوں پروگرام کے لئے 2 ارب روپے فراہم کیے گئے ہیں۔
وزارتِ انفارمیشن ٹیکنالوجی کے تیار پلان کے لیے ای گورننس کے ذریعے 1 ارب سے زائد مختص کیے گئے ہیں۔
فنکاروں کی مالی مدد کے لئے آرٹسٹ پروٹیکشن فنڈ کو 250 ملین سے بڑھا کر 1 ارب روپے کردیا گیا ہے۔
لوگوں کو سستی ٹرانسپورٹ مہیا کرنے کے لئے ریلوے کو 40 ارب روپے مختص کیے گئے ہیں۔
کامیاب نوجوانوں پروگرام کے لئے 2 ارب روپے فراہم کیے گئے۔
پی ایس ڈی پی کے لئے 650 ارب روپے کی فراہمی کی جائے گی۔
80 ارب روپے توانائی اور بجلی کے لئے فراہم کیے گئے ہیں۔
دیا میر بھاشا ، مہمند اور داسو ڈیموں کے لئے مالی اعانت فراہم کی جا رہی ہے۔
سماجی شعبے کے لئے 250 ارب مختص کئے گئے ہیں۔
مواصلات کے دیگر منصوبوں کے لئے 37 ارب کی فراہمی کی گئی۔
تعلیمی منصوبوں اور مدرسہ کا نصاب ضم کرنے کے ساتھ ساتھ ای اسکولوں کے قیام کے لئے 5 ارب مختص کیے گئے ہیں۔
پانی کے وسائل کے لئے مجموعی طور پر 69 ارب روپے کی فراہمی کی گئی ہے۔
لاہور فیڈرل اور کراچی کے ہسپتالوں میں 13 ارب روپے مختص کئے گئے ہیں۔
زرعی امداد کے لئے 10 ارب مختص کئے گئے ہیں۔
پی ایس ڈی پی کو 650 ارب روپے مختص کیے گئے تھے۔
بجلی کی ترسیل کے نظام کو بہتر بنانے کے لئے 80 ارب مختص کئے گئے ہیں۔
وزارت موسمیاتی تبدیلی کے لئے 6 ارب مختص کیے گئے ہیں۔
شناختی کارڈ کی متعلقہ شرائط 50،000 سے بڑھا کر 100،000 کردی گئی ہے۔
ڈبل کیبن گاڑیوں کے ٹیکس کی شرح میں بھی اضافہ کیا گیا ہے۔
ایف اے ٹی ایف کے 14 نکات مکمل ہوگئے ، جبکہ 11 نکات پر عمل درآمد کیا جا رہا ہے۔
اسٹیٹ بینک انفرادی قرضوں کے لئے 800 ارب روپے فراہم کرے گا۔
تنخواہ دار طبقوں کے لئے ٹیکس کی ادائیگی کی ایک ایپ متعارف کروائی گئی۔
سیمنٹ مینوفیکچرنگ پر محصولات میں کمی لانے کی تجویز ہے۔
2 ارب روپے افغانستان کی بحالی کے لئے دستیاب کردیئے گئے ہیں۔
بلوچستان کو 10 ارب روپے کی خصوصی گرانٹ ملی ہے۔
ٹیکس دہندگان کے لئے اسکول کی فیسوں کے لئے ٹیکس کی ذمہ داری ختم کردی گئی ہے۔
ٹیکس نہ دینے والوں کے لئے سکولوں کی فیسوں کے لئے ٹیکس کی واجبات برقرار ہیں۔
ایکسائز ڈیوٹی 65 فیصد سے بڑھا کر 100 فیصد کردی گئی۔
انرجی ڈرنکس پر ایکسائز ڈیوٹی 13 فیصد سے بڑھا کر 25 فیصد کردی گئی ہے۔
ڈبل کیبن پک اپ فیڈرل ایکسائز ٹیکس کے تابع ہیں۔
زیادہ تر فیس لینے والے تعلیمی اداروں پر 100 فیصد سے زیادہ ٹیکس عائد کیا گیا ہے۔
تعلیمی ادارے جو ہر سال 2 لاکھ روپے سے زیادہ فیس وصول کرتے ہیں انہیں 100 فیصد زیادہ ٹیکس ادا کرنا پڑے گا۔
بجٹ میں ایف اے ٹی ایف کی ضروریات کو بھی مدنظر رکھا گیا ہے۔
زراعت اور ٹڈڈیوں کے خاتمے کے لئے 10 ارب روپے رکھے گئے ہیں۔
تعلیمی اداروں اور شادی ہالز پر ٹیکس کم کیا جائے گا۔
50،000 سے 1 لاکھ روپے تک کی خریداری کے لئے ایک شناختی کارڈ درکار ہو گا۔
عام خریداروں کے لئے شناختی کارڈ کی حد ایک لاکھ روپے ہے۔
سیمنٹ کے نرخوں میں 75.1 فی کلو گرام کمی کی جانے کی تجویز ہے۔

وزیر حماد اظہر کی بجٹ تقریر 1 گھنٹہ 5 منٹ تک جاری رہی۔

Federal Minister for Industries and Production Hamad Azhar presented the federal budget for the financial year 2020-20 in the National Assembly.

During his budget speech, Federal Minister Hamad Azhar thanked the Pakistan Army and said that the Pakistan Army was grateful for the government’s austerity policy.

The key points of the budget speech are as follows:

  • In the budget, the government has announced that no new tax will be imposed to provide relief to the people.
  • Inflation has been proposed to be reduced from 9.1% to 6.5%.
  • It is proposed to allocate Rs. 70 billion for water projects and Rs. 34 billion for ML-1.
  • FED has been increased in imported cigarettes, handcuffs and cigars.
  • It is proposed to increase the duty on imported cigarettes from 65% to 100%.
  • Federal excise duty on electronic cigarettes has been increased.
  • Advance tax will not be levied on autos, motorbike rickshaws and 200cc motorcycles.
  • Mobile phones are allowed in Pakistan.
  • It was proposed to reduce sales tax on mobile phones manufactured in Pakistan.
  • It was proposed to increase the tax on caffeinated beverages from 13% to 25%.
  • Starting from a difficult journey, the people’s cooperation is needed to achieve the desired goals
  • The economic crisis was inherited, the country was on the verge of bankruptcy.
  • The budget deficit in the previous government had reached a record high of Rs 2,300 billion.
  • The current account deficit had reached a peak of Rs 20 billion.
  • The country’s debt had reached 31,000 billion.
  • Exports have not increased in the last five years.
  • Eliminated corruption in 2 years.
  • Rs 2,946 billion has been allocated for interest payments and Rs 470 billion for pension payments to retired employees.
  • Take all possible steps to improve the growth rate, our goal is to revive the economy.
  • The volume of the federal development program has been allocated Rs. 650 billion.
  • Non-tax revenue has been allocated Rs. 1108 billion.
  • FBR revenue increased by 17%.
  • The tax collection target for FBR is Rs 4,963 billion.
  • 100 billion was allocated for FBR.
  • Revenue from privatization is estimated at Rs 100 billion.
  • The volume of the federal development program has been allocated Rs. 650 billion.
  • Non-tax revenue has been allocated Rs. 1108 billion.
  • Eliminating corruption and rehabilitating institutions has been the first priority.
  • Improved foreign exchange reserves.
  • We will meet the target of Rs 1600 billion.
  • 5,000 billion interest was paid.
  • The burden of interest on loans of previous governments fell on the exchequer.
  • The Tehreek-e-Insaf believes in social justice and is committed to achieving it.
  • In the first five months of the current financial year, the budget deficit was reduced from 5% to 3.8%.
  • 5,000 billion in interest was paid due to huge debts of previous governments.
  • Seeing Pakistan’s improving economy, the IMF approved ڈالر 6 billion in expanded funds.
  • Bloomberg named Pakistan one of the best economies in the world in December.
  • Moody’s also rated our rating better.
  • No action has been taken in the past to curb money laundering.
  • Pakistan has been placed on the FATF’s gray list for not taking action against money laundering and terror financing.
  • In June 2018, Pakistan was put on the FATF gray list. Our government improved it by forming the National FATF Committee.
  • We have significantly improved economic indicators in 2 years.
  • The trade deficit was reduced by 31% and the budget deficit was reduced to 3%.
  • This fiscal year, the revenue will be 1600 billion compared to 1160 billion.
  • He has paid huge interest in the last 2 years due to heavy debts of the past.
  • In 9 months, 17 billion in foreign exchange reserves.
  • Divided 74% of loans into long-term loans.
  • Stopped borrowing from SBP.
  • Currency rate market oriented.
  • Obstacles to trade were removed.
  • Efforts were made to improve government institutions and transparent privatization was carried out.
  • With Made in Pakistan, Pakistani products were delivered to international markets.
  • The government introduced structural reforms in all provinces for transparent accountability.
  • The Public Finance Management Act 2019 has been implemented for the first time.
  • The pension system has been reformed.
  • A team was formed under the leadership of Dr. Ishrat Hussain.
  • The team plans to privatize 45 companies and transfer 14 companies to the provinces.
  • The trade deficit was reduced by 31%.
  • Corona virus outbreak shocks Pakistan’s economy
  • Prolonged lockdowns and business shutdowns, travel bans hurt the economy.
  • The closure of industries and businesses reduced GDP by Rs 2,100 billion.
  • covid-19 spending, balancing financial spending is one of the budget priorities.
  • A package of more than Rs 1,200 billion has been approved for the rehabilitation of Corona.
  • In the case of corona virus, Rs. 70 billion has been allocated in the special development budget.
  • Corona virus is allocating 73% of ongoing projects and 27% of new funds.
  • A special 70 70 billion program has been set aside to prevent Corona.
  • A separate Rs 70 billion has been allocated to deal with Covid-19 and other disasters.
  • Farmers were given Rs 50 billion.
  • The federal government’s spending increased with various packages.
  • He gave relief to the construction sector to improve the economy.
  • The SBP also provided special relief to offset the ill effects of the lockdown.
  • The SBP provided Rs 800 billion to banks for individual loans.
  • No supplementary grant was given in the last financial year.
  • Special budgets have been earmarked for FATA and Gilgit-Baltistan.
  • Austerity and reduction of unnecessary expenses will be ensured.
  • The Billion Tree Tsunami and the New Pakistan Housing Scheme have been given protection in the budget.
  • Non-tax revenue is expected to increase.
  • The Ehsas program has been increased from 187 to 208 billion.
  • 180 billion has been allocated, including energy and food.
  • The government is committed to the principles of austerity in these difficult times.
  • Rs 12.89 trillion has been earmarked for defense.
  • A total of Rs 875 billion was earmarked in the federal budget.
  • Rs 71 billion has been allocated for the purchase of medical equipment and Rs 150 billion for poor families.
  • 100 billion has been allocated for the emergency fund.
  • Azad Jammu has allocated Rs 55 billion for Kashmir and Rs 32 billion for Gilgit-Baltistan.
  • 56 billion is also being allocated for integrated districts in KPK.
  • A special grant of Rs 19 billion has been earmarked for Sindh and Rs 10 billion for Balochistan.
  • A subsidy of Rs 180 billion has been provided in the energy and food sectors.
  • 72 billion has been allocated for special area Azad Kashmir.
  • Rs 2 billion has been allocated for the successful youth program.
  • More than Rs 1 billion has been allocated for the Ministry of Information Technology’s prepared plan through e-governance.
  • The Artist Protection Fund has been increased from Rs 250 million to Rs 1 billion for the financial support of artists.
  • Rs 40 billion has been allocated for railways to provide affordable transport to the people.
  • Rs 2 billion has been allocated for the successful youth program.
  • Rs 650 billion is being allocated for PSDP.
  • Rs 80 billion has been allocated for energy and power.
  • Financial resources are being provided for Dia Mir Bhasha, Mohmand and Dasu Dams.
  • 250 billion has been allocated for the social sector.
  • 37 billion has been earmarked for other communication projects.
  • 5 billion has been allocated for the integration of educational projects and madrassa curricula and the establishment of e-schools.
  • A total of Rs. 69 billion has been allocated for water resources.
  • 13 billion has been allocated for Lahore Federal and Karachi hospitals.
  • 10 billion has been allocated for agriculture relief.
  • Rs 650 billion has been allocated for PSDP.
  • 80 billion has been allocated to improve the power transmission system.
  • 6 billion has been allocated for the Ministry of Climate Change.
  • The requirement for National Identity Card has been increased from 50,000 to 100,000.
  • The tax rate on double cabin vehicles was also increased.
  • 14 points of FATF have been completed while 11 points are being implemented.
  • SBP will allocate Rs 800 billion for individual loans.
  • An app has been introduced for the salaried class to pay taxes.
  • It is proposed to reduce the duty on cement production.
  • Rs 2 billion has been allocated for the rehabilitation of Afghanistan.
  • Balochistan will be given a special grant of Rs 10 billion.
  • The tax requirement on school fees for taxpayers has been removed.
  • The tax requirement on school fees for tax evaders remains the same.
  • Excise duty has been increased from 65% to 100%.
  • Excise duty on energy drinks has been increased from 13% to 25%.
  • Double cabin pickups will be subject to federal excise duty.
  • More than 100% tax has been imposed on educational institutions that charge high fees.
  • Educational institutions charging more than Rs 2 lakh per annum will have to pay 100% more tax.
  • FATF requirements are also taken into account in the budget.
  • 10 billion has been allocated for the eradication of agriculture and locusts.
  • Taxes on educational institutions and marriage halls are being reduced.
  • Identity card will be required for purchases of Rs 50,000 to Rs 1 lakh.
  • The ID card limit for ordinary shoppers is Rs. 1 lakh.
  • It is proposed to reduce the duty on cement by 75.1 per kg.

Federal Minister Hamad Azhar’s budget speech lasted 1 hour and 5 minutes.

LEAVE A REPLY

Please enter your comment!
Please enter your name here

Most Popular

Dates Are Blessed With Numerous Health Benefits

کھجوریں صحت سے متعلق متعدد فوائد سے نوازتی ہیں Dates have been known around the world for many health...

Japan Praises Pakistan’s Role For Peace And Stability In Region: ISPR

خطے میں امن اور استحکام کے لئے جاپان کے پاکستان کے کردار کی تعریف: آئی ایس پی آر

Hira Mani Has A Special Message For Her Fans This Ramadan

حرا مانی کا اس رمضان میں اپنے مداحوں کے لئے خصوصی پیغام Actress Hira Mani has a...

750 Rs Prize Bond List No 86 15 April 2021 Quetta Winner List

750 Rs Prize Bond Draw winners has announced at Quetta on 15 April 2021, this is the draw no 86. People can download...

Recent Comments