Home Pakistan Farmers Urged to Act Immediately about Locust Attacks

Farmers Urged to Act Immediately about Locust Attacks

Once again, locust swarms landed in Karachi and attacked crops in the Kathore and Gadap areas, severely damaging the crops as farmers concerned urged the authorities to take immediate action to prevent their crops from being fully damaged. The farmer said it was the second grasshopper attack in Karachi and the government needed to help local farmers save their crops. Earlier, Chief Minister Sindh Syed Murad Ali Shah warned in a letter to Prime Minister Imran Khan that a “massive” grasshopper attack on the provincial agricultural fields could be expected after May 15.

The prime minister said he feared that if the fields were not sprayed in the coming days, the crop could be damaged. He asked the center for support in this regard six months ago. Unfortunately, despite the assurances, no cooperation was made. On April 25, a briefing informed the provincial administration meeting chaired by the Secretary General of Sindh Mumtaz Ali Shah that new flocks of Iranian locusts could arrive in Sindh by May 15 this year. “Around 60 countries around the world have been attacked by swarms of locusts,” the meeting was informed.

The meeting was informed that the government was building camps in 30 locations and assembling 57 teams of 180 people to address the threat. These teams included officials from the Sindh Agriculture Department and the Plant Protection Department.

کسانوں کا ٹڈی دل کے حملوں کے متعلق فوری کاروائی کا مطالبہ

ایک بار پھر ، کراچی میں ٹڈی دل آگئی اور کٹھوڑ اور گڈاپ علاقوں میں فصلوں پر حملہ کیا ، جس سے فصلوں کو شدید نقصان پہنچا کیونکہ متعلقہ کسانوں نے حکام سے اپیل کی کہ وہ اپنی فصلوں کو مکمل طور پر نقصان سے بچانے کے لئے فوری کارروائی کریں۔ کسانوں نے کہا کہ کراچی میں یہ دوسرا ٹڈی دل حملہ ہے اور حکومت کو مقامی کاشتکاروں کو اپنی فصلوں کو بچانے میں مدد کی ضرورت ہے۔ اس سے قبل ، وزیر اعلی سندھ سید مراد علی شاہ نے وزیر اعظم عمران خان کو لکھے گئے خط میں متنبہ کیا تھا کہ 15 مئی کے بعد صوبائی زرعی شعبوں پر “بڑے پیمانے پر” ٹڈی دل کے حملے کی توقع کی جاسکتی ہے۔

وزیر اعظم نے کہا کہ انہیں خدشہ ہے کہ اگر آنے والے دنوں میں کھیتوں پر اسپرے نہ کیا گیا تو فصل کو نقصان ہوسکتا ہے۔ انہوں نے مرکز سے چھ ماہ قبل اس سلسلے میں تعاون کی درخواست کی۔ بدقسمتی سے ، یقین دہانیوں کے باوجود ، تعاون نہیں کیا گیا۔ 25 اپریل کو سیکریٹری جنرل سندھ ممتاز علی شاہ کی زیرصدارت صوبائی انتظامیہ کے اجلاس کو بریفنگ میں بتایا گیا کہ رواں سال 15 مئی تک ایرانی ٹڈیوں کے نئے ریوڑ سندھ آسکتے ہیں۔ اجلاس کو بتایا گیا کہ “دنیا بھر کے 60 کے قریب ممالک پر ٹڈیوں کی بھیڑ نے حملہ کیا ہے”۔

اجلاس کو بتایا گیا کہ حکومت 30 مقامات پر کیمپ بنا رہی ہے اور اس خطرے سے نمٹنے کے لئے 180 افراد پر مشتمل 57 ٹیموں کو جمع کر رہی ہے۔ ان ٹیموں میں محکمہ زراعت سندھ اور پلانٹ پروٹیکشن ڈیپارٹمنٹ کے عہدیدار شامل ہیں۔

LEAVE A REPLY

Please enter your comment!
Please enter your name here

Most Popular

Severe floods in the nursing home caused deaths in Japan

جاپان: نرسنگ ہوم میں شدید سیلاب سے میں اموات جاپان کے جنوبی جزیرے کیشو میں...

India Sends 20,000 more Troops to Chinese Border

بھارت نے چین کی سرحد پر مزید 20 ہزار فوجی بھیج دیئے چین کی جانب سے سرحد...

Okara police arrested 12 men for robbing and murdering residents

اوکاڑہ پولیس نے رہائشیوں کو لوٹنے اور قتل کرنے کے الزام میں 12 افراد کو گرفتار کیا

Police Officers Ordered to Come and Go on Duty without Uniform

پولیس افسران کو بغیر یونیفارم کے ڈیوٹی پر آنے اور جانے کا حکم آئی جی سندھ نے...

Recent Comments