Home Business Pakistan is committed to achieve UN SDGs: Fakhr Imam

Pakistan is committed to achieve UN SDGs: Fakhr Imam

پاکستان اقوام متحدہ کے ایس ڈی جی کے حصول کے لیے پرعزم ہے: فخر امام

Federal Minister for National Food Security and Research Syed Fakhar Imam has said that the Government of Pakistan has achieved a strong partnership and alliance to achieve the United Nations (UN) Sustainable Development Goals (SDGs), especially the goal of zero hunger.

Addressing the UN States Food Systems Pre-Summit 2021 on Friday, the minister said that Pakistan saw the UN Food Systems Summit 2021 as an opportunity to review its progress on the SDGs, specifically the zero hunger target. in dealing with the challenges ahead.

He said that Prime Minister Imran Khan and his team are committed to eradicating hunger and other SDGs. He told the pre-summit meeting that Pakistan, through a comprehensive consultation process, has prepared working papers on all five action tracks and an action plan for implementation of the proposed “game changing solutions”.

Fakhar-e-Imam highlighted that Pakistan faces the challenges of food and nutrition insecurity for a population of more than 215 million, which annually contributes 7.6 billion or 3% of its GDP. He said that the share of agriculture sector in the national GDP was 19.2% and it played the role of lifeline of the national economy in many ways.

He stressed that Pakistan is blessed with a diverse climate, with 10 highly diverse agricultural environments available. “Pakistan has 23 million hectares of arable land, 1,000 km of coastline with three major dams and over 100 smaller dams. All this indicates that a systems-based approach is more applicable for us,” he said.

He reaffirmed that Pakistan intends to increase diversified food production in all agro-ecosystems, reduce post-harvest losses and promote value horticulture with kitchen gardening. He said that Pakistan wants to promote organic farming, cultivation of green manure crops, use of resource conservation technologies and capacity building of all stakeholders and small and medium enterprises. He said the country has focused on building resilience by developing on-site specific technologies. “The primary goal was to move our consumers from a basic grain-based diet to a sustainable, varied and healthy consumption pattern,” he stressed.

The Minister informed the participants before the meeting that the Government of Pakistan has set up an Agricultural Innovation Fund. He commended the Food and Agriculture Organization of the United Nations, the Global Coalition for Better Nutrition, the International Fund for Agricultural Development and the World Food Program for their assistance to Pakistan. He also emphasized on the efforts of Pakistan Agricultural Research Council.

وفاقی وزیر برائے نیشنل فوڈ سکیورٹی اینڈ ریسرچ سید فخر امام نے کہا ہے کہ حکومت پاکستان نے اقوام متحدہ (یو این) پائیدار ترقی کے اہداف (ایس ڈی جی) خاص طور پر صفر بھوک کے ہدف کو حاصل کرنے کے لیےکے لئے مصروف عمل مضبوط شراکت داری اور اتحاد حاصل کیا ہے۔

جمعہ کو اقوام متحدہ کے ریاستوں کے فوڈ سسٹم پری سمٹ 2021 سے خطاب کرتے ہوئے وزیر نے کہا کہ پاکستان نے اقوام متحدہ کے فوڈ سسٹمز سمٹ 2021 کو ایس ڈی جی پر اپنی پیش رفت کا جائزہ لینے کے موقع کے طور پر دیکھا ، خاص طور پر صفر بھوک کا ہدف۔ آنے والے چیلنجز سے نمٹنے کے لیے

انہوں نے کہا کہ وزیراعظم عمران خان اور ان کی ٹیم بھوک اور دیگر ایس ڈی جی کے خاتمے کے لیے پرعزم ہے۔ انہوں نے اجلاس سے قبل کے اجلاس کو بتایا کہ پاکستان نے ایک جامع مشاورتی عمل کے ذریعے پانچوں ایکشن ٹریک پر ورکنگ پیپرز تیار کیے ہیں اور مجوزہ “گیم چینجنگ سلوشنز” پر عمل درآمد کے لیے ایکشن پلان تیار کیا ہے۔

فخر امام نے اس بات پر روشنی ڈالی کہ پاکستان کو 215 ملین سے زائد آبادی کے لیے خوراک اور غذائیت کی عدم تحفظ کے چیلنجز کا سامنا ہے ، جو سالانہ 7.6 ارب یا اس کی جی ڈی پی کا 3 فیصد حصہ ڈالتا ہے۔ انہوں نے کہا کہ قومی جی ڈی پی میں زراعت کے شعبے کا حصہ 19.2 فیصد تھا اور اس نے کئی طریقوں سے قومی معیشت کی لائف لائن کا کردار ادا کیا۔

انہوں نے زور دیا کہ پاکستان ایک متنوع آب و ہوا سے نوازا گیا ہے ، 10 انتہائی متنوع زرعی ماحول دستیاب ہے۔ انہوں نے کہا ، “پاکستان کے پاس 23 ملین ہیکٹر قابل کاشت زمین ، 1000 کلومیٹر ساحلی پٹی ہے جس میں تین بڑے ڈیم اور 100 سے زائد چھوٹے ڈیم ہیں۔ یہ سب اس بات کی نشاندہی کرتے ہیں کہ نظام پر مبنی نقطہ نظر ہمارے لیے زیادہ قابل اطلاق ہے۔”

انہوں نے اس بات کی تصدیق کی کہ پاکستان تمام زرعی ماحولیاتی نظاموں میں خوراک کی متنوع پیداوار بڑھانے ، فصل کے بعد ہونے والے نقصانات کو کم کرنے اور کچن گارڈننگ کے ساتھ قدرتی باغبانی کو فروغ دینے کا ارادہ رکھتا ہے۔ انہوں نے کہا کہ پاکستان نامیاتی کاشتکاری ، سبز کھاد والی فصلوں کی کاشت ، وسائل کے تحفظ کی ٹیکنالوجیز کا استعمال اور تمام اسٹیک ہولڈرز اور چھوٹے اور درمیانے درجے کے کاروباری اداروں کی استعداد کار کو فروغ دینا چاہتا ہے۔ انہوں نے کہا کہ ملک نے سائٹ پر مخصوص ٹیکنالوجیز تیار کرکے لچک پیدا کرنے پر توجہ دی ہے۔ انہوں نے زور دیا کہ “بنیادی مقصد ہمارے صارفین کو بنیادی اناج پر مبنی غذا سے پائیدار ، متنوع اور صحت مند کھپت کے نمونے کی طرف لے جانا تھا۔”

وزیر نے اجلاس سے پہلے شرکاء کو بتایا کہ حکومت پاکستان نے ایک زرعی انوویشن فنڈ قائم کیا ہے۔ انہوں نے اقوام متحدہ کے فوڈ اینڈ ایگریکلچر آرگنائزیشن ، گلوبل کولیشن فار بیٹر نیوٹریشن ، انٹرنیشنل فنڈ فار ایگریکلچرل ڈویلپمنٹ اور ورلڈ فوڈ پروگرام کو پاکستان کی مدد کے لیے سراہا۔ انہوں نے پاکستان زرعی تحقیقاتی کونسل کی کوششوں پر بھی زور دیا۔

LEAVE A REPLY

Please enter your comment!
Please enter your name here

Most Popular

FATF decides to keep Pakistan on gray list

ایف اے ٹی ایف کا پاکستان کو گرے لسٹ میں رکھنے کا فیصلہ The Financial Action Task Force...

Sri Lanka Reached Super 12 defeating Ireland in T20 World Cup

سری لنکا نے ٹی 20 ورلڈ کپ میں آئرلینڈ کو شکست دے کر سپر 12 تک رسائی حاصل کرلی

Senate committee summoned the Finance Adviser and the Governor SBP on inflation

سینیٹ کمیٹی نے مہنگائی پر مشیر خزانہ اور گورنر اسٹیٹ بینک کو طلب کر لیا Taking note of...

Rupee hits new low against US dollar

امریکی ڈالر کے مقابلے میں روپیہ تاریخ کی نئی گراوٹ ریکارڈ The Pakistani rupee hit a new record...

Recent Comments