Home Business IMF rejected all key government proposals in the SBP Amendment Bill

IMF rejected all key government proposals in the SBP Amendment Bill

آئی ایم ایف نے ایس بی پی ترمیمی بل کی تمام اہم حکومتی تجاویز کو مسترد کر دیا

The International Monetary Fund (IMF) has rejected a proposal by the government of Pakistan to keep the way open for borrowing from the SBP.

Even 100% of the central bank’s profits cannot be transferred to the federal government unless the bank receives a cover for its financial obligations. 20% of SBP’s profits will remain with the bank till it achieves the required cover.

Sources told that the IMF has rejected all important proposals of the government of Pakistan to amend the State Bank of Pakistan Act, 1956 and only the appointment of central bank board members and keeping the finance secretary on the board. The authority is recognized but the secretary will not have the power to vote.

On Monday, Finance Adviser Shaukat Tareen told the media that the passage of the Asset Bank Bill was one of the conditions of the IMF that the government had to implement in order to receive the next tranche of ارب 1 billion in January 2022. The IMF also rejected the Pakistani government’s proposal to borrow up to 2% of GDP in one fiscal year.

According to sources, the IMF also did not accept the suggestion that the federal government would give the central bank an inflation target. The IMF, however, has acknowledged the government’s authority to remove the SBP governor over misconduct.

Finance Advisor Shaukat Tareen said the government would ensure that legislation on SBP autonomy was passed. Shaukat Tareen said that it was now agreed that NAB law would also apply to SBP.

انٹرنیشنل مانیٹری فنڈ (آئی ایم ایف) نے ح کومت پاکستان کی جانب سے اسٹیٹ بینک سے قرض لینے کا راستہ کھلا رکھنے کی تجویز کو مسترد کر دیا ہے۔

یہاں تک کہ مرکزی بینک کے منافع کا 100% بھی وفاقی حکومت کو منتقل نہیں کیا جا سکتا جب تک کہ بینک کو اپنی مالی ذمہ داریوں کا احاطہ نہ ملے۔ اسٹیٹ بینک کے منافع کا 20% بینک کے پاس رہے گا جب تک کہ وہ مطلوبہ کور حاصل نہیں کر لیتا۔

ذرائع نے بتایا کہ آئی ایم ایف نے اسٹیٹ بینک آف پاکستان ایکٹ 1956 میں ترمیم اور صرف مرکزی بینک کے بورڈ ممبران کی تقرری اور سیکرٹری خزانہ کو بورڈ میں رکھنے کی حکومت پاکستان کی تمام اہم تجاویز کو مسترد کر دیا ہے۔ اختیار تسلیم کیا جاتا ہے لیکن سیکرٹری کو ووٹ دینے کا اختیار نہیں ہوگا۔

پیر کو مشیر خزانہ شوکت ترین نے میڈیا کو بتایا کہ اثاثہ بنک بل کی منظوری آئی ایم ایف کی ان شرائط میں سے ایک تھی جن پر حکومت کو عملدرآمد کرنا تھا تاکہ جنوری 2022 میں ایک ارب ڈالر کی اگلی قسط حاصل کی جا سکے۔ ایک مالی سال میں جی ڈی پی کے 2 فیصد تک قرض لینے کی پاکستانی حکومت کی تجویز کو مسترد کر دیا۔

ذرائع کے مطابق آئی ایم ایف نے وفاقی حکومت کی جانب سے مرکزی بینک کو مہنگائی کا ہدف دینے کی تجویز بھی قبول نہیں کی۔ تاہم آئی ایم ایف نے حکومت کی جانب سے اسٹیٹ بینک کے گورنر کو بدانتظامی پر ہٹانے کے اختیار کو تسلیم کیا ہے۔

مشیر خزانہ شوکت ترین نے کہا کہ حکومت اسٹیٹ بینک کی خود مختاری سے متعلق قانون سازی کو یقینی بنائے گی۔ شوکت ترین نے کہا کہ اب اس بات پر اتفاق ہوا ہے کہ نیب قانون کا اطلاق اسٹیٹ بینک پر بھی ہوگا۔

LEAVE A REPLY

Please enter your comment!
Please enter your name here

Most Popular

Alia Bhatt made her fan cry

عالیہ بھٹ نے اپنے مداح کو رلا دیا Bollywood star Alia Bhatt recognized her fan even after 7...

Most watched match of Pak-India World Cup T20

پاک بھارت ورلڈ کپ ٹی20 کا سب سے زیادہ دیکھا جانے والا میچ The International Cricket Council (ICC)...

Taliban-U.S talks will resume in in Doha, Qatar

قطر کے دارالحکومت دوحہ میں طالبان امریکہ مذاکرات دوبارہ شروع ہوں گے Zabihullah Mujahid, a spokesman for the...

Dollar reached a record high of Rs 179

ڈالر 179 روپے کی بلند ترین سطح پر پہنچ گیا The dollar continued to soar, reaching a high...

Recent Comments