Home Business I am optimistic about the success of negotiations with the IMF: Shaukat...

I am optimistic about the success of negotiations with the IMF: Shaukat Tareen

میں آئی ایم ایف کے ساتھ مذاکرات کی کامیابی کے لیے پرامید ہوں: شوکت ترین

Federal Finance Minister Shaukat Tareen has expressed hope that high-level talks between Pakistan and the International Monetary Fund (IMF) will be successful and the 6 6 billion Extended Fund Facility (EFF) will be restored.

“I’m convinced that the progress we’ve made so far is really encouraging and we’re seeing it happen,” he told the American Institute of Peace, according to the state-run APP News Agency.

The Federal Minister of Finance said that the sixth round of talks with the IMF was the most important part of the visit to the United States.

He said that in the last phase, there would be meetings with seniors in the IMF, including the managing director of the fund.

Shaukat Tareen said his government was confident that the IMF’s demand for an increase in electricity rates would fuel inflation.

He further said that this point was made in a technical discussion with the fund in which it was also stated that the increase in tariff would be done gradually so that there would be no sudden impact on inflation.

Shaukat Tareen said that there were some problems in the power sector which the government had to pay the price.

The Federal Minister further said that the performance of distribution and generation companies is also being improved, all this is being successfully negotiated with the IMF.

The Federal Minister for Finance said that there is no impediment to growth and the Pakistani economy will grow by more than 5% during FY22-2021.

He said Pakistan’s economy was the fourth largest in Asia in the 1960s, but Zulfiqar Ali Bhutto’s nationalization policy and the Afghan war in 1979 affected economic growth.

Shaukat Tareen said that Prime Minister Imran Khan took over an economy that was struggling in 2018 with a current account deficit of ارب 20 billion and an unstable fiscal deficit.

He added that the prime minister had to make some non-political decisions, including a sharp IMF program, including the devaluation of the currency.

He said that during the financial year 2021, the growth was recorded at more than 4% which was 0.5% last year.

The Federal Minister said that about 60% of the population of Pakistan is under 30 years of age, they need jobs so the government has restored agriculture, industry, exports and housing.

Shaukat Tareen said the government was also making sure that the underprivileged were not ignored and that the effects of positive economic growth were expected on them. Methods used.

To this end, the government is providing technical training to farmers and low-income families to issue health cards and help about 4.4 million families.

وفاقی وزیر خزانہ شوکت ترین نے امید ظاہر کی ہے کہ پاکستان اور بین الاقوامی مالیاتی فنڈ (آئی ایم ایف) کے درمیان اعلیٰ سطحی مذاکرات کامیاب ہوں گے اور 6 ارب ڈالر کی توسیعی فنڈ سہولت (ای ایف ایف) بحال ہو جائے گی۔

سرکاری ادارے اے پی پی نیوز ایجنسی کے مطابق ، انہوں نے امریکی انسٹی ٹیوٹ آف پیس کو انٹرویو دیتے ہوئے کہا ، “مجھے یقین ہے کہ ہم نے اب تک جو پیش رفت کی ہے وہ واقعی حوصلہ افزا ہے اور ہم اسے ہوتے ہوئے دیکھ رہے ہیں

وفاقی وزیر خزانہ نے کہا کہ آئی ایم ایف کے ساتھ مذاکرات کا چھٹا دور دورہ امریکہ کا سب سے اہم حصہ تھا۔

انہوں نے کہا کہ آخری مرحلے میں آئی ایم ایف میں سینئرز کے ساتھ ملاقاتیں ہوں گی جن میں فنڈ کے منیجنگ ڈائریکٹر بھی شامل ہیں۔

شوکت ترین نے کہا کہ ان کی حکومت کو یقین ہے کہ آئی ایم ایف کی جانب سے بجلی کے نرخوں میں اضافے کا مطالبہ افراط زر کو ہوا دے گا۔

انہوں نے مزید کہا کہ یہ نکتہ فنڈ کے ساتھ ایک تکنیکی گفتگو میں کیا گیا جس میں یہ بھی بتایا گیا تھا کہ ٹیرف میں اضافہ بتدریج کیا جائے گا تاکہ مہنگائی پر کوئی اچانک اثر نہ پڑے۔

شوکت ترین نے کہا کہ پاور سیکٹر میں کچھ مسائل تھے جن کی قیمت حکومت کو ادا کرنی پڑی۔

وفاقی وزیر نے مزید کہا کہ ڈسٹری بیوشن اور جنریشن کمپنیوں کی کارکردگی کو بھی بہتر کیا جا رہا ہے ، یہ سب آئی ایم ایف کے ساتھ کامیابی سے بات چیت کی جا رہی ہے۔

وفاقی وزیر خزانہ نے کہا کہ ترقی میں کوئی رکاوٹ نہیں ہے اور پاکستانی معیشت مالی سال 22-2021 کے دوران 5 فیصد سے زیادہ ترقی کرے گی۔

انہوں نے کہا کہ 1960 کی دہائی میں پاکستان کی معیشت ایشیا میں چوتھی بڑی تھی لیکن ذوالفقار علی بھٹو کی نیشنلائزیشن پالیسی اور 1979 میں افغان جنگ نے معاشی ترقی کو متاثر کیا۔

شوکت ترین نے کہا کہ وزیراعظم عمران خان نے ایک ایسی معیشت سنبھالی جو 2018 میں 20 ارب ڈالر کے کرنٹ اکاؤنٹ خسارے اور غیر مستحکم مالیاتی خسارے کے ساتھ جدوجہد کر رہی تھی۔

انہوں نے مزید کہا کہ وزیر اعظم کو کچھ غیر سیاسی فیصلے کرنے تھے ، بشمول ایک تیز آئی ایم ایف پروگرام ، کرنسی کی قدر میں کمی سمیت۔

انہوں نے کہا کہ مالی سال 2021 کے دوران ترقی 4 فیصد سے زیادہ ریکارڈ کی گئی جو گزشتہ سال 0.5 فیصد تھی۔

وفاقی وزیر نے کہا کہ پاکستان کی تقریبا 60 60٪ آبادی 30 سال سے کم عمر کی ہے ، انہیں نوکریوں کی ضرورت ہے لہذا حکومت نے زراعت ، صنعت ، برآمدات اور رہائش کو بحال کیا ہے۔

شوکت ترین نے کہا کہ حکومت یہ بھی یقینی بنارہی ہے کہ پسماندہ لوگوں کو نظر انداز نہ کیا جائے اور ان پر مثبت معاشی ترقی کے اثرات متوقع ہوں۔ طریقے استعمال کیے گئے۔

اس مقصد کے لیے حکومت کسانوں اور کم آمدنی والے خاندانوں کو ہیلتھ کارڈ جاری کرنے اور تقریبا 4 40 لاکھ خاندانوں کی مدد کے لیے تکنیکی تربیت فراہم کر رہی ہے۔

LEAVE A REPLY

Please enter your comment!
Please enter your name here

Most Popular

FATF decides to keep Pakistan on gray list

ایف اے ٹی ایف کا پاکستان کو گرے لسٹ میں رکھنے کا فیصلہ The Financial Action Task Force...

Sri Lanka Reached Super 12 defeating Ireland in T20 World Cup

سری لنکا نے ٹی 20 ورلڈ کپ میں آئرلینڈ کو شکست دے کر سپر 12 تک رسائی حاصل کرلی

Senate committee summoned the Finance Adviser and the Governor SBP on inflation

سینیٹ کمیٹی نے مہنگائی پر مشیر خزانہ اور گورنر اسٹیٹ بینک کو طلب کر لیا Taking note of...

Rupee hits new low against US dollar

امریکی ڈالر کے مقابلے میں روپیہ تاریخ کی نئی گراوٹ ریکارڈ The Pakistani rupee hit a new record...

Recent Comments