Home Business GDP growth is likely to reach 5% in FY2022: SBP

GDP growth is likely to reach 5% in FY2022: SBP

مالی سال 2022 میں جی ڈی پی کی شرح نمو 5 فیصد تک پہنچنے کا امکان ہے: اسٹیٹ بینک

The State Bank of Pakistan has said that the inflation rate is likely to be 7-9% in the current financial year while the economic growth rate is expected to be 4-5%.

The SBP has released the Annual Economic Review Report for the Fiscal Year 21-2020 which reviews the Fiscal Year 2020-21. According to the report, Pakistan’s economy recovered in FY21 and real GDP growth reached 3.9 percent.

More importantly, with this expansion in economic activity, the current account balance fell to a 10-year low, resulting in a significant increase in foreign exchange reserves. General Consumer Price Index (CPI) inflation also moderated during the year, mainly due to relatively stable prices of non-food and non-energy items. However, due to supply challenges, overall prices, especially food items, remained high.

The report says that the economic recovery has been helped by strong and targeted monetary control of the epidemic, as well as immediate and targeted monetary and fiscal measures to address its impact on economic growth and revenue.

The government provided targeted financial assistance up to about 2% of GDP through the economic stimulus package, which helped more than 15 million families through emergency cash transfers.

In addition, in FY21, the government provided a number of incentives to boost activities in the agriculture, manufacturing and export sectors. Large-scale manufacturing increased by 14.9% in FY21 due to the lower core effect of compression due to code in FY20.

Agricultural growth was slightly lower than in FY20, however, wheat, rice and maize production rose to historic levels. SBP’s concessional refinancing schemes such as temporary financial refinance facility and long term financing facility also played an important role in increasing the fixed investment loans during the year.

The current account deficit narrowed sharply due to workers’ record high remittances and export receipts, which led to an increase of بینک 5.2 billion in SBP’s foreign exchange reserves during the year.

Receipts from the IMF and other multilateral and bilateral lenders, the issuance of Eurobonds after a long hiatus, and deposits and investment proceeds from non-resident Pakistanis through bright digital accounts provided substantial external financing. High exports partially offset a significant increase in import payments.

The fiscal deficit, which was 8.1 percent of GDP last year, fell to 7.1 percent in the year under review. Development spending also recovered modestly, declining for the past three years.

اسٹیٹ بینک آف پاکستان نے کہا ہے کہ رواں مالی سال مہنگائی کی شرح 7 سے 9 فیصد رہنے کا امکان ہے جبکہ معاشی ترقی کی شرح 4 سے 5 فیصد رہنے کا امکان ہے۔

اسٹیٹ بینک نے مالی سال 21-2020 کے لیے سالانہ اقتصادی جائزہ رپورٹ جاری کر دی ہے جس میں مالی سال 2020-21 کا جائزہ لیا گیا ہے۔ رپورٹ کے مطابق مالی سال 21 میں پاکستان کی معیشت بحال ہوئی اور حقیقی جی ڈی پی کی شرح نمو 3.9 فیصد تک پہنچ گئی۔

مزید اہم بات یہ ہے کہ معاشی سرگرمیوں میں اس توسیع کے ساتھ کرنٹ اکاؤنٹ بیلنس 10 سال کی کم ترین سطح پر آ گیا جس کے نتیجے میں زرمبادلہ کے ذخائر میں نمایاں اضافہ ہوا۔ سال کے دوران جنرل کنزیومر پرائس انڈیکس (سی پی آئی) افراط زر میں بھی کمی آئی، جس کی بنیادی وجہ غیر خوراکی اور غیر توانائی کی اشیاء کی نسبتاً مستحکم قیمتیں ہیں۔ تاہم، سپلائی کے چیلنجوں کی وجہ سے، مجموعی قیمتیں، خاص طور پر کھانے کی اشیاء، بلند رہیں۔

رپورٹ میں کہا گیا ہے کہ معاشی بحالی میں وبا پر مضبوط اور ہدف بنائے گئے مالیاتی کنٹرول کے ساتھ ساتھ معاشی نمو اور محصول پر اس کے اثرات سے نمٹنے کے لیے فوری اور ہدف بنائے گئے مالیاتی اور مالیاتی اقدامات سے مدد ملی ہے۔

حکومت نے اقتصادی محرک پیکج کے ذریعے جی ڈی پی کے تقریباً 2 فیصد تک ہدفی مالی امداد فراہم کی، جس نے ہنگامی نقد رقم کی منتقلی کے ذریعے 15 ملین سے زیادہ خاندانوں کی مدد کی۔

اس کے علاوہ، مالی سال 21 میں، حکومت نے زراعت، مینوفیکچرنگ اور برآمدی شعبوں میں سرگرمیوں کو فروغ دینے کے لیے متعدد مراعات فراہم کیں۔ مالی سال 21 میں بڑے پیمانے پر مینوفیکچرنگ میں 14.9 فیصد اضافہ ہوا جس کی وجہ مالی سال 20 میں کوڈ کی وجہ سے کمپریشن کے بنیادی اثر کی وجہ سے ہے۔

زرعی ترقی مالی سال 20 کے مقابلے میں قدرے کم تھی، تاہم، گندم، چاول اور مکئی کی پیداوار تاریخی سطح پر پہنچ گئی۔ اسٹیٹ بینک کی رعایتی ری فنانسنگ اسکیموں جیسے کہ عارضی مالیاتی ری فنانس کی سہولت اور طویل مدتی فنانسنگ کی سہولت نے بھی سال کے دوران مقررہ سرمایہ کاری کے قرضوں کو بڑھانے میں اہم کردار ادا کیا۔

کارکنوں کی ریکارڈ بلند ترسیلات اور برآمدی وصولیوں کی وجہ سے کرنٹ اکاؤنٹ خسارہ تیزی سے کم ہوا، جس کی وجہ سے سال کے دوران اسٹیٹ بینک کے زرمبادلہ کے ذخائر میں 5.2 بلین ڈالر کا اضافہ ہوا۔

آئی ایم ایف اور دیگر کثیر جہتی اور دو طرفہ قرض دہندگان کی جانب سے وصولیاں، طویل وقفے کے بعد یورو بانڈز کا اجرا، اور روشن ڈیجیٹل اکاؤنٹس کے ذریعے غیر مقیم پاکستانیوں کی جانب سے جمع اور سرمایہ کاری کی رقم نے خاطر خواہ بیرونی مالی اعانت فراہم کی۔ زیادہ برآمدات درآمدی ادائیگیوں میں نمایاں اضافے کو جزوی طور پر پورا کرتی ہیں۔

مالیاتی خسارہ جو کہ گزشتہ سال جی ڈی پی کا 8.1 فیصد تھا، زیر جائزہ سال میں گر کر 7.1 فیصد رہ گیا۔ ترقیاتی اخراجات بھی معمولی طور پر بحال ہوئے، پچھلے تین سالوں سے کم ہو رہے ہیں۔

LEAVE A REPLY

Please enter your comment!
Please enter your name here

Most Popular

Alia Bhatt made her fan cry

عالیہ بھٹ نے اپنے مداح کو رلا دیا Bollywood star Alia Bhatt recognized her fan even after 7...

Most watched match of Pak-India World Cup T20

پاک بھارت ورلڈ کپ ٹی20 کا سب سے زیادہ دیکھا جانے والا میچ The International Cricket Council (ICC)...

Taliban-U.S talks will resume in in Doha, Qatar

قطر کے دارالحکومت دوحہ میں طالبان امریکہ مذاکرات دوبارہ شروع ہوں گے Zabihullah Mujahid, a spokesman for the...

Dollar reached a record high of Rs 179

ڈالر 179 روپے کی بلند ترین سطح پر پہنچ گیا The dollar continued to soar, reaching a high...

Recent Comments