Home Business Foreign sales, rising prices affected Pakistan's shares

Foreign sales, rising prices affected Pakistan’s shares

غیر ملکی فروخت ، قیمتوں میں اضافے نے پاکستان کے حصص کو متاثر کیا

Dealers said foreign sales, rising commodity prices and supply concerns weighed on market sentiment on Wednesday.

Ahsan Mahanti of Arif Habib Corporation said the stock fell sharply on foreign sales, weak global equities and investors’ concerns over rising trade deficits.

Reports of a 6 per cent decline in cement sales and an 11.5 per cent increase in government debt to around Rs 39.5 trillion from July to September 2021 played a catalytic role in ending the recession.

The Pakistan Stock Exchange’s KSE-100 shares index lost 0.66 percent or 293.34 points to close at 44,373.23 points. The KSE-30 Shares Index lost 0.46 percent or 79.91 points to close at 17,463.24 points.

A maximum of 554 scraps were active, of which 109 were advanced, 423 were reduced and 22 remained unchanged. The finished market was 252.76 million shares compared to 334.68 million shares traded in the previous trading session.

“Thanks to foreign investors, selling pressure continues in the market,” said Arif Habib, an analyst at Ltd.

Eye-catching commodity prices, especially coal, have an impact on cement and steel sector stocks and on the O & GMCs, E&P sectors due to fears of a possible increase in circular debt arising from rising energy costs. Its effects are compounded.

An important condition for the resumption of the program by the International Monetary Fund (IMF) is the revision of electricity tariffs, in addition to the elimination of subsidies and increase in tax revenue.

These measures are expected to increase corporate sector earnings in the coming partial or full quarter, which is also reflected in stock prices.

The effects of sales in bicycles, as well as oil and gas chains, have been seen in the market as a whole, with significant selling pressure in TRG among tech sector stocks.

Among the companies that gained the most, Mari Petroleum closed at Rs 1749.97 per share with an increase of Rs 68.61. And Gatron Industries rose by Rs 32.62 to close at Rs 467.62 per share.

Among the companies that showed the highest losses, Rafhan Maize fell by Rs 100 to close at Rs 10,800 per share. With Pakistan fell by Rs 48.37 to close at Rs 1,486.63 per share.

The highest volume was seen in Unity Foods with a turnover of 25.71 million shares. Scrap rose eight paise to close at Rs 31.88 per share. It is followed by Telecard Limited with a turnover of 20.51 million shares. It fell by Rs 1.35 to close at Rs 20.15 per share. World Call Telecom came in third with a turnover of 16.83 million shares. It fell 14 paise to end at Rs 2.69.

ڈیلرز نے بتایا کہ غیر ملکی فروخت ، اشیاء کی قیمتوں میں اضافہ ، سپلائی کے خدشات کے درمیان بدھ کو مارکیٹ کے جذبات کو متاثر کیا۔

عارف حبیب کارپوریشن میں احسن مہانتی نے کہا کہ غیر ملکی فروخت ، کمزور عالمی مساوات اور بڑھتے ہوئے تجارتی خسارے پر سرمایہ کاروں کے خدشات پر اسٹاک تیزی سے گر گیا۔

جولائی تا ستمبر 2021 میں سیمنٹ کی فروخت میں 6 فیصد کی کمی اور حکومتی قرضوں میں 39.5 کھرب روپے کے قریب 11.5 فیصد اضافے کی اطلاعات نے مندی کے اختتام میں ایک اتپریرک کردار ادا کیا۔

پاکستان اسٹاک ایکسچینج کے ایس ای 100 شیئرز انڈیکس 0.66 فیصد یا 293.34 پوائنٹس کی کمی سے 44،373.23 پوائنٹس پر بند ہوا۔ کے ایس ای-30 شیئرز انڈیکس 0.46 فیصد یا 79.91 پوائنٹس کی کمی سے 17،463.24 پوائنٹس پر بند ہوا۔

زیادہ سے زیادہ 554 سکریپس فعال تھیں ، جن میں سے 109 ایڈوانس ، 423 میں کمی اور 22 میں کوئی تبدیلی نہیں آئی۔ پچھلے تجارتی سیشن میں 334.68 ملین حصص کے کاروبار کے مقابلے میں تیار مارکیٹ کا حجم 252.76 ملین حصص رہا۔

عارف حبیب لمیٹڈ کے ایک تجزیہ کار نے کہا کہ غیر ملکی سرمایہ کاروں کے بشکریہ ، مارکیٹ میں فروخت کا دباؤ جاری ہے۔

چشم کشا اشیاء کی قیمتیں ، خاص طور پر کوئلے کا اثر سیمنٹ اور سٹیل سیکٹر اسٹاک اور او او اور جی ایم سی ای اور پی سیکٹرز پر پڑتا ہے کیونکہ توانائی کے بڑھتے ہوئے اخراجات سے پیدا ہونے والے سرکلر ڈیٹ میں ممکنہ اضافے کے خدشات ہیں۔ اس کے اثرات زیادہ ہیں۔

بین الاقوامی مالیاتی فنڈ (آئی ایم ایف) کی جانب سے پروگرام کی بحالی کے لیے ایک اہم شرط بجلی کے نرخ میں اوپر کی نظر ثانی ہے ، اس کے علاوہ سبسڈی کا خاتمہ اور ٹیکس کی آمدنی میں اضافہ۔

یہ اقدامات جزوی یا مکمل طور پر آنے والے سہ ماہیوں میں کارپوریٹ سیکٹر کی آمدنی میں اضافے کی توقع رکھتے ہیں ، جو اسٹاک کی قیمتوں پر بھی جھلک رہا ہے۔

سائیکلیکل میں فروخت کے اثرات ، نیز تیل اور گیس کی زنجیروں کو مجموعی طور پر مارکیٹ میں دیکھا گیا ہے جس میں ٹیک سیکٹر اسٹاک کے درمیان ٹی آر جی میں نمایاں فروخت کا دباؤ ہے۔

جن کمپنیوں نے سب سے زیادہ فائدہ حاصل کیا ان میں ماری پٹرولیم 68.61 روپے اضافے کے ساتھ 1749.97 روپے فی شیئر پر بند ہوئی۔ اور گیٹرون انڈسٹریز 32.62 روپے بڑھ کر 467.62 روپے فی شیئر پر بند ہوئے۔

جن کمپنیوں نے سب سے زیادہ نقصانات کی عکاسی کی ان میں رفحان مکئی ، 100 روپے کم ہوکر 10،800 روپے فی شیئر پر بند ہوئی۔ اور ویتھ پاکستان 48.37 روپے کم ہوکر 1،486.63 روپے فی شیئر پر بند ہوا۔

25.71 ملین حصص کے کاروبار کے ساتھ سب سے زیادہ حجم یونٹی فوڈز میں دیکھا گیا۔ سکریپ آٹھ پیسے بڑھ کر 31.88 روپے فی شیئر پر بند ہوئی۔ اس کے بعد ٹیلی کارڈ لمیٹڈ 20.51 ملین حصص کا کاروبار کرتا ہے۔ یہ 1.35 روپے کم ہوکر 20.15 روپے فی شیئر پر بند ہوا۔ ورلڈ کال ٹیلی کام 16.83 ملین حصص کے کاروبار کے ساتھ تیسرے نمبر پر رہا۔ یہ 14 پیسے گر کر 2.69 روپے پر ختم ہوا۔

LEAVE A REPLY

Please enter your comment!
Please enter your name here

Most Popular

FATF decides to keep Pakistan on gray list

ایف اے ٹی ایف کا پاکستان کو گرے لسٹ میں رکھنے کا فیصلہ The Financial Action Task Force...

Sri Lanka Reached Super 12 defeating Ireland in T20 World Cup

سری لنکا نے ٹی 20 ورلڈ کپ میں آئرلینڈ کو شکست دے کر سپر 12 تک رسائی حاصل کرلی

Senate committee summoned the Finance Adviser and the Governor SBP on inflation

سینیٹ کمیٹی نے مہنگائی پر مشیر خزانہ اور گورنر اسٹیٹ بینک کو طلب کر لیا Taking note of...

Rupee hits new low against US dollar

امریکی ڈالر کے مقابلے میں روپیہ تاریخ کی نئی گراوٹ ریکارڈ The Pakistani rupee hit a new record...

Recent Comments