Home Business Condition to meet 5 demands from Pakistan before next IMF deal

Condition to meet 5 demands from Pakistan before next IMF deal

آئی ایم ایف کے اگلے معاہدے سے قبل پاکستان سے 5 مطالبات پورے کرنے کی شرط

The IMF demanded that Pakistan meet five demands for the next deal, including the abolition of tax breaks and the independence of the SBP.

Talking to media in Islamabad, he said that a deal would be reached with the IMF soon. While the demand for increase in electricity prices has been met.

He said that the bill for abolition of tax exemption and SBP autonomy has been prepared, the Ministry of Law is finalizing the draft of legal bills, currency rate and monetary policy is under the purview of SBP.

Shaukat Tareen said that this year the growth rate will be more than 5%, we will provide assistance to the poor and provide them interest free loans, in the next 4 years the government will spend Rs 1400 billion on a successful Pakistan program.

He said that the successful youth will give a loan of Rs. 140 billion for the program in the next four years, Rs. 260 billion has been set aside for Ehsas program and Rs. 350 billion is being allocated for Ehsas ration.

The finance adviser said that even during Corona, the government provided financial resources to the business, the government is doing what was necessary for the poor, despite the IMF program will help the poor, the government’s job is to social welfare. It works but it is difficult due to lack of funds.

He said that the present government has started social welfare schemes, the government will achieve the target of 5% economic growth this financial year, the effect of economic growth will reach the people on the condition of sustainability.

آئی ایم ایف نے مطالبہ کیا کہ پاکستان اگلے معاہدے کے لیے پانچ مطالبات پورے کرے، جس میں ٹیکس میں چھوٹ کا خاتمہ اور اسٹیٹ بینک کی آزادی شامل ہے۔

اسلام آباد میں میڈیا سے گفتگو کرتے ہوئے انہوں نے کہا کہ آئی ایم ایف سے جلد ڈیل ہو جائے گی۔ جبکہ بجلی کی قیمتوں میں اضافے کا مطالبہ پورا کر دیا گیا ہے۔

انہوں نے کہا کہ ٹیکس استثنیٰ کے خاتمے اور اسٹیٹ بینک کی خود مختاری کا بل تیار کرلیا گیا ہے، وزارت قانون قانونی بلوں کے مسودے کو حتمی شکل دے رہی ہے، کرنسی ریٹ اور مانیٹری پالیسی اسٹیٹ بینک کے دائرہ اختیار میں ہے۔

شوکت ترین نے کہا کہ رواں سال شرح نمو 5 فیصد سے زائد رہے گی، غریبوں کی مدد اور انہیں بلاسود قرضے فراہم کریں گے، آئندہ 4 سال میں حکومت کامیاب پاکستان پروگرام پر 1400 ارب روپے خرچ کرے گی۔

انہوں نے کہا کہ کامیاب ہونے والے نوجوانوں کو 50 لاکھ روپے قرض دیں گے۔ اگلے چار سالوں میں پروگرام کے لیے 140 ارب روپے، احساس پروگرام کے لیے 260 ارب روپے مختص کیے گئے ہیں۔ احساس راشن کے لیے 350 ارب روپے مختص کیے جا رہے ہیں۔

مشیر خزانہ نے کہا کہ کورونا کے دوران بھی حکومت نے کاروبار کو مالی وسائل فراہم کیے، حکومت غریبوں کے لیے وہ کام کر رہی ہے جو ضروری تھا، آئی ایم ایف پروگرام کے باوجود غریبوں کی مدد کریں گے، حکومت کا کام سماجی بہبود ہے۔ یہ کام کرتا ہے لیکن فنڈز کی کمی کی وجہ سے مشکل ہے۔

انہوں نے کہا کہ موجودہ حکومت نے سماجی بہبود کے منصوبے شروع کیے ہیں، حکومت رواں مالی سال 5 فیصد معاشی ترقی کا ہدف حاصل کرے گی، معاشی ترقی کے اثرات پائیداری کی شرط پر عوام تک پہنچیں گے۔

LEAVE A REPLY

Please enter your comment!
Please enter your name here

Most Popular

Alia Bhatt made her fan cry

عالیہ بھٹ نے اپنے مداح کو رلا دیا Bollywood star Alia Bhatt recognized her fan even after 7...

Most watched match of Pak-India World Cup T20

پاک بھارت ورلڈ کپ ٹی20 کا سب سے زیادہ دیکھا جانے والا میچ The International Cricket Council (ICC)...

Taliban-U.S talks will resume in in Doha, Qatar

قطر کے دارالحکومت دوحہ میں طالبان امریکہ مذاکرات دوبارہ شروع ہوں گے Zabihullah Mujahid, a spokesman for the...

Dollar reached a record high of Rs 179

ڈالر 179 روپے کی بلند ترین سطح پر پہنچ گیا The dollar continued to soar, reaching a high...

Recent Comments